کورونا سے بچاﺅ کا واحد راستہ گھر پر ہی رہیں :کلکٹر اندور


اندور میں اگلے سات دنوں تک نافذ رہے گا کرفیو
اندور 31 مارچ(نیا نظریہ بیورو) منگل کو 18 کورونا کے نئے مریض سامنے آنے کے بعدکلکٹر جناب منیش سنگھ نے صبح ریزیڈینسی کوٹھی پر افسران کی ایک میٹنگ طلب کی ۔ اجلاس کے بعد انہوں نے صاف کر دیا کہ اندور اگلے سات دنوں تک اس طرح کی سختی کے لئے تیار ر ہے ۔ فی الوقت جو نظام چل رہا ہے وہی چلتا رہے گا۔ کلکٹر نے کہا – قریب ساڑھے 400 لوگ کورنٹائن میں رکھے گئے ہیں ، جس میں سے 285 کے بلڈ سیمپل کو جانچ کیلئے بھیجاگیا ہے ۔یہ تعداد تجاوز کرے گی۔ ہو سکتا 2 سے ڈھائی سو تک مثبت مریض اندور میں سامنے آئیں ، لیکن ہم اس کے لئے ذہنی طور سے تیار ہیں۔ جو بھی مریض مختص ہو رہے ہیں ، ہم ان کے رابطہ میں آئے لوگوں کوکوارنٹائن ہا¶س میں بھیج رہے ہیں ۔ ان کی جانچ کرائی جا رہی ہے ۔ شہر میں منگل کو18 اور مریضوں میں کورونا وائرس کی تصدیق ہونے کے بعد انتظامیہ نے ہنگامی اجلاس طلب کی ۔اجلاس میں مستقبل کے مد نظر لائحہ عمل تیا ر کیا گیا ۔ کلکٹر جناب منیش سنگھ نے واضح کیا کہ انتظامیہ ہر صورت حال کا سامنا کرنے کے قابل ہے۔ کورونامثبت کی رپورٹ آنے کے پہلے ہی کورونامشتبہ افراد کو گھر میں ہی کوارنٹائن کیا گیا ہے ۔ ان کا علاج وہیں پر چل رہا ہے۔ انہوں نے لوگوں سے ہدایت پر عمل کرنے کی اپیل کی ہے۔ ساتھ ہی یہ بھی بتایا کہ دودھ کی فراہمی گھروں پر ہی یقینی بنائی جا ئے گی ۔ کلکٹر نے بتایا کہ کوروناسے بچا¶ کا صرف ایک ہی راستہ ہے اور وہ ہے لوگ آپ گھر میں ہی رہے۔
سردی ، کھانسی والے مریضوں کو بھی کوارنٹائن کیا جا ئیگا
کلکٹر نے بتایا کہ ہمارے طرف گزشتہ دنوں کوارنٹائن کئے گئے مریضوں میں سے کچھ اور کی رپورٹ مثبت آ سکتی ہے ، لیکن اس کا ایک پہلو یہ ہے کہ کوارنٹائن کئے گئے مریضوں میں مسلسل بہتری ہو رہی ہے۔ ہمارے لئے رانی پورا ہاتھی پا لا اور نیا پوراجیسے علاقے چیلنج ہیں ۔اس سے نمٹنے کے لئے ہم تیار ہیں۔ نئے کیس کی فہرست آنے کے بعد ان کے خاندان یا رشتے داروں وغیرہ کو بھی کوارنٹائن کیا جائے گا۔ ہم نے سروے ٹیم کو میدان میں اتار دیا ہے۔ اگر کسی کو سردی ، کھانسی بھی ہوگی تو اسے بھی کوارنٹائن کیا جائے گا۔
سی ایم ایچ او ڈاکٹر پروین جڑیا نے بتایا کہ اندور میں منگل کو جو 18 مثبت مریض ملے ہیں۔ یہ وہ ہیں جن کے لواحقین پہلے سے ہی اس بیماری کی زد میں ہیں۔ مشتبہ لگنے پر انہیںکوارنٹائن کر ان کے نمونوں کوجانچ کے لئے بھیجا گیا ہے ۔ ہم نے پیر کو 140 سیمپل لئے تھے۔ اس پہلے 144 سیمپل لئے جا چکے تھے۔ اس طرح سے ہم نے ابھی تک 300 کے قریب سیمپل لئے ہیں۔ کل لئے گئے نمونے لیے آج انکوائری کے لئے بھیجا گیا ہے۔ قریب ڈیڑھ سو نمونے کی رپورٹ آنی باقی ہے۔ وہیں ، اُجین کے پانچ مریضوں کے بعد یہ تعداد 49 ہو جاتی ہے۔ صوبہ میں ابھی تک 64 مریض ہو چکے ہیں۔ جڑیا کے مطابق گزشتہ دو دنوں سے کوار نٹائن کرنے کی تعداد بڑھا دی گئی ہے۔ اب قریب 400 لوگ کوارنٹائن میں ہیں۔ اس میں سے کچھ پہلے اور کچھ دوسری اسٹیج میں ہیں۔ سماج میں زیادہ لو گوں تک یہ وائرس نہ پھیلے اس لئے اور زیادہ افراد کوارنٹائن کیا جائے گا۔ اندور ملک میں چوتھا سب سے متاثرہ شہر ہے اس میں مریضوں کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے ۔قابل ذکر ہے کہ کو رونا وائرس کے انفیکشن سے ملک میں 27 ریاست متاثر ہیں۔ شہروں کی بات کریں تو 24 مارچ تک کورونامفت رہا اندور گزشتہ چھ دنوں میں ملک کے سب سے متاثرہ شہروں کی فہرست میں چوتھے نمبر پر پہنچ گیا ہے۔ 31 مارچ تک اندور میں مثبت کی تعداد 49 تک پہنچ گئی ہے ، اس میں پانچ اُجین کے ہیں ، جن کا اندور میں علاج چل رہا ہے۔ کیرل میں ملک کا پہلا مریض 30 جنوری کو سامنے آیا تھا۔ مہاراشٹر اور دوسری جگہوں پر مارچ کے پہلے اور دوسرے ہفتے میں مریضوں کا آنا شروع ہوا۔ اندور میں مریض بڑھنے کی رفتار کو اتوار تک 380فیصدتھی ، وہ اب تجاوز کر 880 فیصد ہو گئی ۔