افطارو سحری کی خریداری کے لئے عوام کاہجوم

لاک ڈاون کی خلاف ورزی:

بھوپال:27اپریل(نیانظریہ بیورو)
ملک میں لاک ڈاو¿ن نافذ ہوئے تقریباًایک ماہ سے زیادہ عرصہ گزرچکاہے۔اس دوران ضروری اشیاء اور ماہ رمضان کی تیاریوں کی خواہشات اب ظاہر ہونے لگیں ہیں۔ راجدھانی کے مسلم اکثریتی علاقوں میں ہر شام ہونے والی عارضی مارکیٹ میں لوگ نہ تو معاشرتی فاصلے کا خیال رکھتے ہیں اور نہ ہی شہر میںکوروناکے پھیلاو¿ کا خدشہ محسوس کرتے ہیں۔شہر کے حالات کو دیکھ کر شہر قاضی سید مشتاق علی ندوی نے ایک بار پھر لوگوں سے درخواست کی ہے کہ وہ ان کی ضروریات اور خواہشات پر نگاہ رکھیں۔ پولیس اور انتظامیہ کے تعاون پر مبنی رویہ پر اپنا مثبت رویہ رکھیں۔ گھروں سے صرف اہم کام کے لئے ہی باہر نکلیں۔ اس دوران معاشرتی فاصلے کا بھی خاص خیال رکھیں۔ شہر قاضی نے ایک بار پھر اس بات کا اعادہ کیا کہ صرف چند ہی لوگ نماز اور تراویح کے لئے مسجد میں پہنچیں۔ باقی لوگوں کو چاہئے کہ وہ گھروں میں نماز اورقیام کریں ۔ رمضان کے مہینے کے روزے ، نماز ، عبادات ، تلاوت میں مشغول رہیں اورپوری دنیامیں امن وسکون ہواس کے لئے دعا کریں۔ شہر قاضی کا کہنا تھا کہ لاک ڈاو¿ن کے دوران رمضان شروع ہونے کی وجہ سے سب کو بہتر وقت مل گیا ہے ، تاکہ وہ نماز میں زیادہ سے زیادہ وقت صرف کریں۔اوراللہ کوراضی کریں۔
ان علاقوں میںہوتی ہے بھیڑ:
پرانے شہر کے مسلم علاقوں میں ان دنوں افطار کے لئے پھل فروٹ کی دکانوں کو ہر شام استعمال کیا جارہا ہے۔ بدھوارہ ، جمعراتی ، اتوارہ ، شاہجہان آباد ، قازق کیمپ ، ابراہیم پورہ ، رائل مارکیٹ سمیت شہر کے بہت سے علاقوں میں بڑی تعداد میں لوگ ان عارضی بازاروں میں پہنچ رہے ہیں۔
لاک ڈاو¿ن کی مدت 3 مئی:
وزیر اعظم نریندر مودی کے دوسرے مرحلے کی لاک ڈاو¿ن کے اعلان کے مطابق ، 3 مئی کو توقع کی جارہی ہے کہ اسے کچھ مراعات ملیں گی یا پوری طرح سے مارکیٹ کھل جائے گی۔ لیکن ریاست کے کچھ شہروں سمیت راجدھانی میں ہائبرڈ مریضوں کی بڑھتی ہوئی تعداد کے پیش نظر ، لاک ڈاو¿ن کی مدت میں اضافے کا خدشہ بھی ہے۔ وزیر اعلیٰ شیوراج سنگھ چوہان کے اشارے بھی لوگوں کو یہ احساس دلاتے ہیں کہ اس وقت راجدھانی میں لاک ڈاو¿ن سے راحت کی کم امید ہے۔