Naya Nazariya Urdu Daily from Ujjain

مآب لنچنگ روز بروز بڑھتی جارہی ہے،فرقہ پرستوں کو اتنی چھوٹ کیسے مل گئی؟:مفتی شاہد

Thumb

بھوپال :11 اپریل (نیانظریہ بیورو)کیا انسان کا خون اتنا سستا ہوگیا ہے کہ کبھی بھی اورکہیں بھی کوئی درندہ صفت انسان سیدھے سادھے انسان کا کسی بھی وقت راہ چلتے شخص کو بھیڑ کے ذریعہ مار ڈالے۔گذشتہ روز آسام کے وشوناتھ میں ایک معمر شخص کو بیف بیچنے کے الزام میں بے انتہا پیٹا گیا، یہاں تک کہ وہ شخص گھٹنوں کے بل بھیڑ سے خودپر رحم کی بھیک مانگ رہا تھا، یہی نہیں اسے خنزیر کا گوشت بھی سرعام کھلایا گیا۔کہاں چلی گئی تھی ہماری انسانیت۔میں تو کہتاں ہوں کہ کسی بھی مذہب نے آج تک اس بات کی اجازت نہیں دی کہ کسی انسان پر ناحق ظلم و تشدد کی بوچھار کیا جائے۔یہ ہمارے لئے نہایت ہی افسوس کا مقام ہے کہ آئے دن ایسے واقعات ہمارے ملک ہندوستان کے اندر رونما ہورہے ہیں ،جسے سن کر دل کو بڑا صدمہ پہنچتا ہے۔آخر ہمارے امن شانتی کا پیغام دینے والے ملک کو کس کی نظر لگ گئی؟ یہ نفرت کی ہوا کس نے پھیلایا؟ کس نے ہمارے بھائی چارگی کے اندر زہر گھولنے کا کام کیاہے۔ کیوں مآب لنچنگ کا معاملہ روز بروز بڑھتا جارہا ہے؟ ان فرقہ پرستوں کو اتنی چھوٹ کیسے مل گئی ؟جو قانون کو اپنے ہاتھ میں لیکر جمہوریت کی دھجیاں اڑانے میں لگے ہوئے ہیں۔اس طرح کے سوالات ہمارے ذہن و دماغ میں ہمیشہ گردش کرتے رہتے ہیں۔اگر فوری طور سے اس معاملہ پر غور فکر نہیں کیا گیا تو یہی چیز ہمارے ملک کی ترقی کیلئے نقصادہ ثابت ہوسکتی ہے۔کیوں کہ ملک کا اکثر طبقہ امن و شانتی چاہتا ہے۔ہم حکومت آسام سے مطالبہ کرتے ہیں کہ مجرموں کو سخت سے سخت سزا دی جائیں تاکہ مستقبل میں ایسے جرائم کو انجام دینے سے وہ گریز کریں ،کیوں کہ ماضی میں بھی اس طرح کے واقعات پیش آچکے ہیں۔خیال رہے کہ لوک سبھا انتخابات سامنے ہے اس کو مدنظر رکھتے ہوئے کوئی بھی انسان اپنی جانب سے کسی بھی طرح کی کوئی غلطی نہ کرے کیوں کہ فرقہ پرستوں کی ہرآن یہی کوششیں رہتی ہے کہ کسی بھی طرح سے ملک کی فضاءکو خراب کیا جائے۔ہم برادران وطن کو بھی یہ پیغام دیتے ہیں کہ وہ صبر کے دامن کو مضبوطی سے پکڑے رہیں اور اللہ سے دعاءکریں کہ اے اللہ ہمارے ملک کو سلامت رکھ اور اس ملک میں بسنے والوں کی حفاظت فرما۔

Ads