Naya Nazariya Urdu Daily from Ujjain

اےس کے فائیننس کمپنی پردھوکہ دہی کا لگا الزام

Thumb

اُجین11اپریل(نیا نظریہ بیورو)جگوٹی اُجین کے رہنے والے جناب راجیش پرمار ولد رمیش پرمار نے اندور روڈ پر اےس کے فائیننس کمپنی پر دھوکہ دہی کا الزام لگایا ہے۔ حاصل معلومات کے مطابق فائیننس کمپنی نے جناب راجیش کے منع کرنے کے بعد بھی ان کے جعلی دستخط بنا کر ان کے نام لون نکال لیا ہے اور لون کا چیک کسی تیسرے شخص کے نام بنایا۔دوسری جانب سے ان کی گاڑی فائیننس کمپنی نے زبردستی گھر سے اٹھوا لی۔ پولیس اس معاملہ میں ایف آئی آر درج کرنے اور انصاف کرنے کے بجائے کمپنی سے سمجھوتہ کرنے کے لئے دباو¿ بنا رہی ہے۔جناب راجیش پرمار کے مطابق 9 جون 2018 کو بولیروگاڑی اشوک دیوڑا رہائشی کھانڈاکھےڑی تحصیل ترانہ کو ایک لاکھ روپے نقد دے کر خریدی تھی باقی 3 لاکھ 35 ہزارفائیننس کرواکر دینا تھا۔ گاڑی میرے نام پر ہونے کے بعد اےس کے فائیننس میں فائل لگائی تھی۔ لیکن سود زیادہ ہونے کی وجہ سے میں نے لون لینے سے انکار کر دیا تھا۔ ساتھ میں میرے والد رمیش پرمار کے بھی کاغذ لگے تھے پھر بھی بغیر دستخط کے میرا لون کر دیا گیا اور میرے والد کے فرضی دستخط کمپنی کی جانب کر دیئے گئے اور کمپنی نے کہاتھا کہ ہم چیک تمہارے نام سے جاری کریں گے اور روپے تمہارے اکاو¿نٹ میں جمع ہوں گے۔ لیکن کمپنی نے مجھے چیک نہ دے کر تیسرے شخص کو چیک دے دیا جس کو میں جانتا ہی نہیں ہوں۔ جسے چیک دیا اس کا نام گیانندر سنگھ ہے ۔جناب پرمار نے کہا میرا تنازعہ صارفین فورم میں چل رہا ہے اس دوران بغیر نوٹس دئے فائیننس کمپنی نے بغیر کسی اطلاع کے میری گاڑی اٹھوا لی۔ مجھ سے 500 روپے کا اسٹامپ بھی منگوایا گیا اور اس میں لکھوایا گیا تھا کہ لون کے پیسے تمہارے اکاو¿نٹ میں ہی ٹرانسفر ہوں گے ۔ لیکن ایسا نہیں کیا گیا۔ اب مجھے جان سے مارنے کے لئے کمپنی کے لوگ آئے تھے کئی بار گھر پر بھی آئے جب میں مادھونگر تھانے رپورٹ لکھوانے گیا توٹی آئی نے مجھ سے درخواست لی۔ اس بات کو تقریباً 15 دن گزر جانے کے بعد بھی کوئی کارروائی نہیں ہوئی۔ ٹی آئی نے میری رپورٹ لکھنے سے انکار کر دیا۔ ٹی آئی نے مجھے فون لگا کر تھانے پر ایف آئی آر درج کرانے کے لیے بلاتے ہیں اور تھانے پہنچنے پر مجھ سے کمپنی سے سمجھوتہ کرنے کی بات کرتے ہیں۔ میری فریاد پر کوئی توجہ نہیں دیتے۔

Ads