وزیر اعظم کو کسانوں کا ایم ایس پی کا مطالبہ قبول کرنا چاہئے: ورون گاندھی


نئی دہلی، 20 نومبر: بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے رکن پارلیمنٹ ورون گاندھی نے وزیر اعظم نریندر مودی کو خط لکھا ہے جس میں حکومت سے کہا گیا ہے کہ وہ کسانوں کی کم از کم امدادی قیمت (ایم ایس پی) کو قانونی طور پر پابند بنانے کے دوسرے مطالبے کو قبول کرلینا چاہئے۔
وزیر اعظم کی طرف سے زراعت ایکٹ کو واپس لینے کے اعلان کا خیرمقدم کرتے ہوئے مسٹر ورون گاندھی نے ہفتہ کو اپنے خط میں لکھا کہ کسانوں کی دوسری مانگ کو قبول کرنے سے کسانوں کو ایک بہت بڑا معاشی تحفظ حاصل ہوگا۔
انہوں نے مطالبہ کیا کہ لکھیم پور کھیری واقعہ کی منصفانہ تحقیقات کی جائے اور واقعہ کے ملزم مرکزی وزیر کے خلاف سخت کارروائی کی جائے۔
خط میں مسٹر گاندھی نے لکھا کہ ملک کے کسانوں نے شدید بارش، طوفان اور خراب موسم کے باوجود پرامن طریقے سے تحریک جاری رکھی۔ اس کے لیے کسانوں کو مبارکباد دی جانی چاہیے۔
انہوں نے لکھا کہ اگر مناسب وقت پر زرعی قوانین کو واپس لینے کا فیصلہ کرلیا جاتا تو اس تحریک کی وجہ سے اپنی جانیں دینے والے 700 کسانوں کی جانیں بچائی جا سکتی تھیں۔
بی جے پی کے رکن پارلیمنٹ نے کسانوں کے احتجاج میں مارے گئے تمام 700 کسانوں کے لیے فی ایک کروڑ روپے کا معاوضہ دینے کا بھی مطالبہ کیا ہے تاکہ متاثرین کے اہل خانہ آسانی سے اپنی زندگی گزار سکیں۔
واضح رہے کہ کسانوں کی تحریک اور کسانوں کے مطالبات کی حمایت کرتے ہوئے مسٹر ورون گاندھی ماضی میں کئی بار اس مسئلہ پر اپنی ہی حکومت کے خلاف آواز اٹھاتے رہے ہیں۔