اُجین-فتح آبادٹرین کا وزیر اعظم نے کیا ورچوئلی افتتاح:


انل فیروزیا،پارس جین اور رتلام ڈوےژن کے ڈی آر ایم ونیت گپتا نے دکھائی ہری جھنڈی
اُجین15نومبر(نیا نظریہ بیورو)فتح آباد کے راستے اُجین سے اندور جانے والی ٹرین شروع ہو گئی ہے۔وزیر اعظم نریندر مودی نے بھوپال سے ورچوئلی ہری جھنڈی دکھا کر ٹرین کو روانہ کیا۔یہ ٹرین اُجین اور اندور سے ایک ساتھ 3.32 بجے روانہ ہونی تھی۔ٹرین کو ایم پی انل فیروزیا، ایم ایل اے پارس جین اور رتلام ریلوے ڈوےژن کے ڈی آر ایم ونیت گپتا نے ہری جھنڈی دکھا کر روانہ کیا۔شجاعلپور کے یوٹیوبر پورنیش اپادھیائے نے کہا کہ مجھے اس راستے پر سفر کرنے میں بہتر رابطہ ملا ہے۔اس سے عوام کو بڑا ریلیف ملے گا۔اُجین آنے والے ایک دوسرے شخص نے کہا کہ مجھے اُجین سے آگے کا سفر کرنا ہے، دوسری ٹرین میں زیادہ بھیڑ تھی اور اس ٹرین میں کوئی بھیڑ نہیں تھی، یہ صاف ستھری تھی، اس لیے خاندان کو بھی اس میں لے آیا۔ اُجین سے فتح آباد ٹریک پرمیمو ٹرین پہلی بار اندور سے اُجین پہنچی۔فروری 2014 سے اس روٹ پر ٹرین بند تھی۔پہلی بار آنے والی اس ٹرین میں اندور سے تقریباً 13 مسافر اُجین پہنچے۔انہوں نے بتایا کہ اندور سے تقریباً 50 مسافر بیٹھے تھے لیکن کچھ راستے میں اسٹیشن پر اتر گئے۔اندور سے نئی ٹرین کے ذریعے اُجین آئے رادھیہ شیام شرما نے کہا کہ ہمیں بہت خوشی ہے کہ ہمیں اپ ڈاﺅن میں آسانی ہوجائے گی۔ اُجین سے اندور کے اوقات کو تبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔سیما سنگھ نے کہا کہ مجھے اُجین کی شادی میں آنا تھا، جب مجھے نئی ٹرین کے بارے میں پتہ چلا تو اس میں آگئی۔ بس کا کرایہ بہت زیادہ ہے۔ طالب علم روی گرجر نے کہا کہ مجھے کوچنگ جانا ہے، اب اُجین سے اندور جانے میں کوئی پریشانی نہیں ہوگی۔ابھیشیک تیواری نے کہا کہ اُجین سے صبح 6.20 کا وقت ٹھیک نہیں ہے۔ اگر یہ ٹرین 7 بجے تک چلتی ہے تو بھی مسافروں کی تعداد بہت بڑھ جائے گی۔میڈیکل کی تعلیم حاصل کرنے والی جیوتی نے کہا کہ صبح 6.20 کا وقت میرے لیے موزوں ہے۔ اندور سے کوچنگ کی تعلیم حاصل کرنے کے بعدمیں شام 4 بجے اُجین واپس آ سکتی ہوں۔ہمارے لیے فخر کی بات ہے کہ اس ٹریک کا وزیراعظم نے افتتاح کیا۔ کورونا کے بعد اب ریل کی سرگرمیاں دوبارہ پٹری پر آ رہی ہیں، یہ ٹرین پہلے دن 2 گھنٹے 10 منٹ کی تاخیر سے اُجین پہنچی۔ فتح آباد میں اس کا پرتپاک استقبال کیا گیا۔
مودی نے کہا کہ یہ نئی ٹرین مہاکال کے شہر اُجین اور ملک کے سب سے صاف ستھرے شہر اندور کو جوڑنے کے لیے شروع ہوئی ہے۔ اب اندور کے لوگ ایک ہی دن میں آسانی سے مہاکال کے درشن کر سکیں گے۔ اندور اپ ڈاو ¿ن میں اُجین اور روٹ کے لوگوں کو آسانی ہوگی۔ اس سے وقت اور پیسہ دونوں کی بچت ہوگی۔اُجین کو اندور سے جوڑنے کے لیے آج سے ایک نئی ٹرین دستیاب ہوگی۔ یہ ٹرین آج دو پہر 3.32 بجے اُجین اور اندور سے الگ الگ روانہ ہوئی۔ وزیر اعظم نریندر مودی نے بھوپال کے کملا پتی اسٹیشن سے اس ٹرین کا ورچوئلی افتتاح کیا۔ کل یعنی منگل سے یہ ٹرین باقاعدگی سے چلنا شروع ہو جائے گی۔ ٹرین میں 12 بوگیاں ہوں گی۔ یہ ٹرین اُجین سے اندور شام 5.15 بجے پہنچے گی جبکہ اندور سے 3.32 بجے روانہ ہو کر شام 5.25 بجے اُجین پہنچے گی۔
اس ٹرین کے چلنے کے ساتھ ہی اُجین اور اندور کے درمیان ایک اور راستہ دستیاب ہوگا۔ 62 کلومیٹر کا یہ سفر میمو ٹرین کے ذریعے صرف 1.15 گھنٹے میں مکمل کیا جا سکتا ہے۔ اس ٹرین کی اوسط رفتار 42 کلومیٹر فی گھنٹہ رکھی جائے گی۔ جبکہ پہلے دن یہ ٹرین 35 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے چلے گی۔
فتح آباد روٹ پر چلنے والی میمو ٹرین دو چکر لگائے گی۔ اس دوران دونوں ٹرینوں کے نمبر تبدیل کیے جائیں گے۔ اُجین سے چلنے والی ٹرینوں کی تعداد 69211 اور 69213 ہوگی، جب کہ اندور سے چلنے والی ان ٹرینوں کی تعداد 69212 اور 69214 ہوگی۔ تاہم یہ ٹرین 09445 نمبر سے اُجین اور 09446 نمبر سے اندور روانگی کے پہلے دن خصوصی ٹرین کے طور پر روانہ ہوگی۔
اُجین سے اندور کے درمیان چلنے والی میمو ٹرین کا کرایہ 40روپئے ہے۔ یہ دیواس روٹ سے 10 سے 25 روپے کم ہے۔ تاہم میل ایکسپریس کے اس کرایہ پر ریلوے کی طرف سے نظر ثانی کی جائے گی۔ اس کے آغاز کے موقع پر ریلوے کی جانب سے ٹرین کا کرایہ 15 روپے رکھا گیا ہے۔
ٹرین کو اُجین اور اندور کے درمیان 8 اسٹاپ دیے جائیں گے۔ ٹرین ہر اسٹیشن پر 2 منٹ رکے گی۔ اُجین سے روانہ ہونے کے بعد یہ ٹرین پہلے چنتامن، لیکوڑا، فتح آباد، چندراوتی گنج، اجنود، بلودہ تکون، پالیا، لکشمی بائی نگر اور اندور اسٹیشنوں پر رکے گی۔ جبکہ اندور سے آنے والی ٹرین بھی ان اسٹیشنوں پر رکے گی۔ یہ وہی اسٹاپیجز ہیں جو میٹر گیج ٹرین کے دوران دیے گئے تھے۔