عمران خان پر اپوزیشن کی تنقید، الیکشن کمیشن میں اراکین کی تقرری سے متعلق معاملہ


اسلام آباد، 14 نومبر: پاکستان میں اپوزیشن کی جماعتوں نے الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کے اراکین کی تقرری پر نوتشکیل شدہ پارلیمانی پینل میں دو ایسے وزراء کو شامل کرنے پر وزیر اعظم عمران خان کی قیادت والی حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے جو خودتوہینِ کمیشن کے الزامات کا سامنا کر رہے ہیں۔
اپوزیشن پارٹی کےاراکین میں سے ایک نے کہا، ’ایک طرف وزیراعظم نے اینٹی کرپشن واچ ڈاگ کے چیئرمین کی تقرری پر اپوزیشن کے اہم رہنما سے مشاورت کرنے سے انکار کردیا ہے کیونکہ وہ بدعنوانی کے مقدمات کا سامنا کر رہے ہیں، تو وہیں دوسری جانب وہ اراکین پارلیمنٹ سے دو ایسے وزراء کی حمایت کرنے کے لیے کہہ رہے ہیں جنہوں نے نہ صرف کمیشن اور اس کے سربراہ کے خلاف توہین آمیز تبصرہ ہے بلکہ جو ابھی تفتیش کے دائرے میں ہیں لیکن اس کے باوجود انھیں اس پینل میں لایا گیا ہے، جنھیں کمیشن کے دو اراکین کی تقرری پر فیصلہ کرنا ہے‘۔
ذرائع کے حوالے سے ڈان نیوز نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے، پینل کی تشکیل کے لیے کی گئی تبدیلیوں کے تحت اطلاعات کے وزیر فواد چودھری کو وزیر تعلیم اور خصوصی تربیت کے وزیر شرافت محمود کی جگہ پر لیا گیا ہے اور سینیٹر اعظم سواتی نے سینیٹر ہدایت اللہ کی جگہ لی ہے۔