کسانوں کو نہیںمل پارہا ڈی اے پی یوریا


ہوشنگ آباد12نومبر(عادل فاضلی)موسم سرما کی فصلیں بونے کا وقت آچلاہے۔کسانوں کو ڈی اے پی یوریا نہیں مل رہی ہے۔اگر ڈی اے پی یوریا بروقت نہ ملی تو کسان اپنی فصل نہیںاگاسکے گا۔ جس کا خمیازہ پورے ہندوستان کو بھگتنا پڑے گا۔ پپریا میں ایم پی ایگرو اور ڈبل لاک پر کسانوں کو ڈی اے پی یوریا کی تقسیم کا نظام بنایا گیا ہے جو کہ افراتفری کا شکار نظر آتا ہے۔کیونکہ نہ تو کافی عملہ ہے اور نہ ہی کافی اسٹاک۔ایسے میں کسانوں کے مطابق صبح سے ہی کسان لائن میں آکر انتظار کرتے ہیں۔لیکن شام کو مایوسی ہاتھ لے کر گھر واپس چلے جاتے ہےں۔کسانوں کا کہنا ہے کہ ان کے پاس اسٹاک موجود ہونے کے بعد بھی وہ یہ الاٹمنٹ نہیں کر رہے۔ایسا بھی لگتا ہے کہ کسانوں یا بڑے کسانوں کو پہلے ہی مختص کیا گیا ہے،جس کی وجہ سے اب الاٹمنٹ نہیں ہو سکتا۔گوداموں میں صرف الاٹ شدہ ڈی اے پی یوریا رکھا گیا ہے۔جو کہ الاٹ شدہ کسان کو ان کی آمد پر دیا جائے گا یا سوسائٹیوں کو پہنچا دیا جائے گا۔مجموعی طور پر کسان پریشان ہیں کہ آیا انہیں اپنی گندم کی فصل کے لیے ڈی اے پی یوریا ملے گا یا نہیں۔عوامی نمائندے ووٹ لینے گاو ¿ں گاو ¿ں جاتے ہیں لیکن ان مسائل پر وہ ان جگہوں سے دور رہتے ہیں۔یہ ایک قابل بحث سوال ہے جو ہمیشہ عوامی نمائندوں پر لگتارہا ہے۔