بھوپال میں وزیر اعظم کے میگا ایونٹ کی تیاری،13کروڑ ہوں گے خرچ


بھوپال11نومبر(نیا نظریہ بیورو)بھوپال کے جمبوری میدان میں 15 نومبر کو قبائلی کنونشن ہونے جا رہا ہے۔ جس میں وزیر اعظم نریندر مودی شرکت کریں گے۔ وہ 1 گھنٹہ 15 منٹ تک اسٹیج پر رہیں گے۔ اس کے ساتھ ہی ریاست بھر سے تقریباً 2 لاکھ قبائلی بھی کانفرنس میں شرکت کریں گے۔ دارالحکومت میں گزشتہ ڈیڑھ سال میں یہ پہلا میگا ایونٹ ہے، اس لیے تیاریاں بھی میگا انداز میں کی جا رہی ہیں۔ 5 ڈوم بنائے جا رہے ہیں۔قبائلیوں کے بیٹھنے کے لیے بڑے بڑے پنڈال بھی بنائے گئے ہیں۔ ان میں پردے ڈالے جا رہے ہیں۔ تقریباً 300 مزدور اس کام میں لگے ہوئے ہیں۔
ڈوم پنڈال بنانے کی ذمہ داری مدھیہ پردیش، بہار، اتر پردیش، چھتیس گڑھ اور گجرات کے کارکنوں کی ہے۔ جمبوری میدان میں کام ایک ہفتہ پہلے سے شروع کیا گیا تھا۔ اس کے علاوہ پی ایم نریندر مودی اور سی ایم شیوراج سنگھ چوہان کے کٹ آو ¿ٹ بھی بنائے جا رہے ہیں، جو پورے پنڈال میں لگائے جائیں گے۔
وزیر اعظم مودی کے علاوہ مرکزی اسٹیج پر صرف وزیر اعلیٰ شیوراج اور منتخب لیڈر ہی شامل ہوں گے۔ ایک بڑی ایل ای ڈی سکرین لگائی جائے گی تاکہ انتہائی سرے پر بیٹھے لوگ بھی وزیراعظم کی تقریر سن اور دیکھ سکیں۔ پنڈال میں 100 سے زائد سکرینیں لگائی جائیں گی۔
ڈوم اور پنڈال کی تعمیر 2 دن پہلے یعنی 13 نومبر تک کرنے کا ہدف مقرر کیا گیا ہے۔ شہری انتظامیہ کے وزیر بھوپیندر سنگھ نے تیاریاں جلد مکمل کرنے کو کہا ہے۔ سی ایم شیوراج سنگھ چوہان خود نگرانی کر رہے ہیں۔
کورونا انفیکشن کی وجہ سے گزشتہ ڈیڑھ سال میں یہ پہلا پروگرام ہے، جس میں وزیر اعظم مودی شرکت کر رہے ہیں۔ جس کی وجہ سے حکومت اور بی جے پی کے لوگ تیاریوں میں مصروف ہیں۔کانفرنس کے مقام پر اب سے سخت حفاظتی انتظامات کیے جا رہے ہیں۔ مرکزی گنبد کے قریب ایک پولیس اہلکار تعینات ہے۔ غیر ضروری لوگوں کو اندر جانے کی اجازت نہیں دی جا رہی ہے۔ایونٹ کے لیے مجموعی طور پر 16 کروڑ روپے مختص کیے گئے ہیں۔ اس میں سے 13 کروڑ روپے صرف جمبوری میدان میں ہونے والے پروگرام میں خرچ ہوں گے۔ اس کے علاوہ بڑوانی کو 77 لاکھ، کھرگون کو 72 لاکھ، سیہور کو 71 لاکھ، دھار کو 62 لاکھ اور ہوشنگ آباد کو 61 لاکھ روپے دیے گئے ہیں۔ یہ رقم ان اضلاع کے قبائلیوں کی نقل و حمل اور رہائش پر خرچ کی جائے گی۔ بھوپال ضلع کو سب سے زیادہ 1 کروڑ 16 لاکھ روپے دیے گئے ہیں۔