حمیدیہ اسپتال واقعہ: (لیڈ)


بچوں کو فورا ًنجی اسپتال میں داخل کرا دےتے تو کئی بچوں کی جانیں بچائی جاسکتی تھی:عارف مسعود
بھوپال11نومبر(نیا نظریہ بیورو)ایم اےل اے عارف مسعود کی قیادت میں آج بڑی تعداد میں کانگریس کارکنان کے ساتھ متاثرہ خاندانوں کو لے کر زور دار نعربازی کرتے ہوئے تھانہ کوہ فضا پہنچے۔تھانے کا گھیراﺅ کر ذمہ داران کے نام دی گئی درخواست میںمجرموں کے خلاف کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا۔نیز کلکٹر آفس کا بھی گھیراﺅ کیا۔
ایم اےل اے عارف مسعود نے کہا کہ حکومت کی ناکامی کے چلتے اتنا بڑا حادثہ بھوپال کے کملانہرو اسپتال کے بچہ وارڈ میں ہوا جس میں معصوم بچوں کی جان چلی گئی۔لےکن حکومت انصاف اور معاوضہ دلانے کے بجائے مرنے والے بچوں کے اعداد و شمار چھپانے اور مجرموں کو بچانے میںلگی ہے۔اس لئے ابھی تک مجرموں پر کوئی کارروائی نہیں کی گئی ہے۔
انہوںنے مزیدکہا کہ وزیر اعلیٰ شیوراج سنگھ چوہان وزیر اعظم کی آمد کی تیاریوں میں مصروف ہیں۔ان کے پاس اتنا وقت بھی نہیں ہے کہ اتنے بڑے دل دہلا دینے والے واقعہ پر ابھی تک اسپتال کا دورہ کرنا مناسب نہیں سمجھا۔کئی خاندانوں کے گھروں کے چراغ جلنے سے پہلے ہی بجھ گئے۔وقت رہتے حکومت اور ان کے طب تعلیم وزیر واقعہ کے بعد بچوں کو فورا نجی اسپتال میں داخل کرا دےتے تو کئی بچوں کی جانیں بچائی جاسکتی تھی۔
عارف مسعود نے بتایا کہ اس سلسلہ میںآج متاثر خاندانوں کے ساتھ تھانہ کوہ فضا کے بعد کلکٹر آفس پر مظاہرہ کرکے ایک درخواست گذار ترنم خان شوہر عامر خان جن کے بچے کی آگ واقعہ میں موت ہوئی تھی ان کا نام مرنے والے بچوں کی فہرست میں شامل نہیں کیا گیا کیونکہ حکومت کے اعداد و شمار چھپانے کی وجہ سے ان بچوں کا نام فہرست میں شامل نہیں کیا گیا۔انہوںنے مطالبہ کیا کہ اس بچے کا نام بھی فہرست میں شامل کیا جائے۔
ملزمان کے خلاف ایف آئی آر کا مطالبہ کرنے جا رہے ایم ایل اے عارف مسعود کوہ فضا پولیس نے تھانے کے باہر ہی روک دیا۔بڑی تعداد میں ساتھ پہنچے کارکنان نے خوب نعرے بازی کی۔اس کے بعد سی ایس پی ناگیندر پٹیریا نے مسعود کو محدود تعداد میں لوگوں کے ساتھ تھانے میں داخل ہونے کی اجازت دی۔کارکنوں کی موجودگی کے باعث علاقے میں کافی دیر تک ٹریفک کا نظام متاثر رہا۔جس دوران عارف مسعود کی درخواست پر تھانے کے اندر کارروائی ہو رہی تھی، اس وقت باہر موجود کارکنوں کی بڑی تعداد اسپتال انتظامیہ، وزیر وشواس سارنگ اور وزیر اعلیٰ شیوراج سنگھ چوہان کے خلاف نعرے لگاتی رہی۔ اس دوران سارنگ کو برطرف کرنے کے نعرے بھی لگائے گئے۔ کارکنوں نے متاثرین کے اہل خانہ کو امداد اور انصاف فراہم کرنے کا مطالبہ بھی کیا۔
ایم ایل اے عارف مسعود نے کہا کہ اعداد و شمار چھپانے اور مجرموں کو بچانے کی کوشش کرنے والی حکومت متاثرین کو انصاف نہیں دے رہی۔ پولیس نے ایف آئی آر درج نہ کی تو 15 تاریخ کو وزیراعظم کے دورہ کے موقع پر احتجاج کیا جائے گا۔ مسعود نے کہا کہ ہم اس معاملے پر سیاست نہیں چاہتے تاہم حکومت اخلاقیات کی بنیاد پر معاملے میں مناسب کارروائی کرے۔