اُجین کلکٹر کی پہل بنی مثال:


ایک دن میں لگائے گئے32 ہزار ڈوز، ایم پی، ایم ایل ایز اور انتظامی افسران بھی میدان میں اترے
اُجین10نومبر(نیا نظریہ بیورو)کورونا کے خلاف جنگ جیتنے کے لیے دوسری خوراک کتنی اہم ہے، یہ آج اُجین میں گھر گھر جا کر سمجھایا گیا۔ اس کے لیے کلکٹر آشیش سنگھ کی پہل کا اثردےکھنے کو ملا۔ یہ پہلی بار ہے کہ دوسری خوراک کو اتنی سنجیدگی سے لیا گیا۔ بدھ کی شام تک32 ہزار 558 خوراکیں لگائے جاچکے تھے۔
دراصل کلکٹر نے ضلع اور ڈوےژن کے 57 افسران کی ڈیوٹی لگائی تھی۔ ہر افسر کو ہدایت دی گئی کہ وہ کم از کم 30 گھروں میں جائیں اور دروازے کھٹکھٹائیں اور پوچھیں کہ کیا کورونا ویکسین لگائی گئی ہے یا نہیں۔ ایم پی میں یہ اپنی نوعیت کا پہلا تجربہ ہے۔
اس کا اثر یہ ہوا کہ نہ صرف 57 افسران بلکہ ایم پی انل فیروزیا، ایم ایل اے پارس جین اور کئی کونسلر اور بی جے پی-کانگریس پارٹی کے کارکنان نے بھی قیادت کی اور گھر گھر جا کر ویکسینیشن کے بارے میں پوچھا۔
کلکٹر آشیش سنگھ نے کہا کہ مسلسل ویکسینیشن کو لے کر ایک سستی چھائی ہوئی ہے۔ لہٰذا جو ٹیم میدان میں ہے اسے متحرک کرنے کے ساتھ حوصلہ افزائی بھی کرنی تھی۔ آنگن واڑی کارکنان یا دوسرے لوگ جن پر لوگوں کو ویکسین سنٹر تک لانے کی ذمہ داری ہوتی ہے، وہ کئی بار گھر سے باہر نہیں نکلتے۔ لیکن آج سب اس تجربے کے ساتھ متحرک رہے۔
ویکسینیشن کے لیے ضلع بھر میں 500 سے زائد ویکسینیشن مراکز قائم کیے گئے تھے۔ اُجین شہر میں صبح 9 بجے سے 120 مراکز پر ٹیکہ کاری کا کام شروع کر دیا گیا۔ کوویشیلڈ اور کو ویکسین دونوں کی دوسری خوراک دی گئی۔
ٹیکہ کاری کے دوسرے مرحلے کا آغاز کرنے کے لیے عوامی نمائندے اور اہلکار سرسوتی شیشو مندر، پپلی ناکا میں واقع ویکسینیشن سنٹر پہنچے۔ ایم پی انیل فیروزیہ، ایم ایل اے پارس جین، کلکٹر آشیش سنگھ، میونسپل کمشنر انشل گپتا، ایس ڈی ایم کلیانی پانڈے، ایڈیشنل کمشنر منوج پاٹھک اور دیگر افسران یہاں موجود تھے۔