ایم پی الیکٹرسٹی کمپنی کے انتظامات سے جگمگاتا رہا اندور:

700 گرڈز پر رات بھر کی گئی نگرانی، 500 سے زیادہ شکایات کا ہوافوری ازالہ
اندور05نومبر(نیا نظریہ بیورو)دیوالی کی رات نہ صرف پورا شہر بلکہ دیہی علاقہ بھی روشنیوں سے جگمگاتے رہے۔ اس دوران بجلی کی بندش یا شارٹ سرکٹ کے باعث کسی بھی علاقے میں آگ لگنے کا کوئی بڑا واقعہ پیش نہیں آیا اور رات بھر پورا ضلع روشن رہا۔ دراصل اس کے پیچھے سب سے بڑی وجہ ایم پی الیکٹرسٹی کمپنی کا اس بار ٹھوس نظام تھا۔ اس دوران پاور کمپنی نے 700 گرڈز، 432 زونز اور ڈسٹری بیوشن سنٹرز پر افسران و ملازمین کی خصوصی ڈیوٹیاں لگا کر بجلی کی سپلائی کو معمول پر رکھا۔ اس عرصے کے دوران گھریلو اور تجارتی شعبے میں بجلی کی طلب میں بھی اضافہ ہوا ہے۔
سپرنٹنڈنٹ انجینئر (اربن ایریا) منوج شرما نے کہا کہ کمپنی کے منیجنگ ڈائریکٹر امیت تومر نے دیوالی کے پیش نظر بازار کے علاقوں میں بجلی کی سپلائی اور خصوصی ٹیموں کی کڑی نگرانی کرنے کی ہدایات دی تھی۔اس پر بازار علاقہ سے متعلق زون اور ڈوےژن کے افسران نے راجباڑا، جواہر مارگ، ٹیکسٹائل مارکیٹ، ایم جی روڈ، کھجوری بازار، صرافہ، ملہار گنج، مٹی کے برتن بازار، شکر بازار، ایم ٹی ایچ، وجے نگر جیسے مقامات پر سخت نگرانی کی۔ وغیرہ اس دوران شہر کے 600 سے زائد ملازمین کے ساتھ تقریباً 70 انجینئر اس انتظام میں شامل تھے۔
رات گئے 500 سے زائد شکایات موصول ہوئیں جس پر فوری ٹیمیں موقع پر پہنچ گئیں اور آدھے ڈیڑھ گھنٹے میں بجلی کی سپلائی کو باقاعدہ کر دیا گیا۔ سٹاف افسران کو سرکل، ڈویڑن، سب ڈویڑن، زون، گرڈ، بڑے چوراہوں پر تعینات کیا گیا تاکہ بلاتعطل بجلی میسر رہے۔ سپرنٹنڈنٹ انجینئر ڈی این شرما کی قیادت میں 350 ملازمین نے اندور دیہی کے ہاتوڈ، مہو، سنور، پتھم پور، دیپالپور، گوتم پورہ، مان پور، بیتما، مہوگاو ¿ں میں نظام کو برقرار رکھا۔ تاہم شہری علاقوں کے مقابلے دیہی علاقوں میں شکایات کم تھیں۔