ٹائیگر ابھی زندہ ہے: دگوجئے سنگھ نے جواب میں کہا کئی شیروں کا کیا ہے شکار


بھوپال:3جولائی (نیانظریہ بیورو)
کانگریس سے بی جے پی میں گئے جیوتی رادتیہ سندھیا نے بھوپال میں کمل ناتھ اور دگوجئے سنگھ کو چلینج دیتے ہوئے کہاتھا کہ ٹائیگر ابھی زندہ ہے۔ اس کے جواب میں دگوجئے سنگھ نے کہا کہ ہم نے بھی شیر کا شکار کیا ہے۔اندرا گاندھی کے ذریعہ قانون بنادینے کے بعد ہم نے شکار کرنا بند کردیا تھا۔ ریاست کی سیاست میں ٹائیگر خوب دھمال مچارہا ہے۔ گذشتہ سال کمل ناتھ حکومت کو دھمکی دیتے ہوئے شیوراج سنگھ چوہان نے کہا تھا کہ ٹائیگر ابھی زندہ ہے۔ شیوراج سنگھ نے خود کو ٹائیگر خطاب کیا تھا۔جمعرات کو شیوراج کابینہ توسیع کے پروگرام میں شامل ہونے آئے جیوتی رادتیہ سندھیا نے ریاستی بی جے پی کے دفتر میں منعقدپروگرام میں اسٹیج سے کمل ناتھ اور دگوجئے کو للکارتے ہوئے کہا کہ اتنا سمجھ لو ٹائیگر ابھی زندہ ہے۔ جمعہ کو دگوجئے سنگھ نے ٹویٹر کے ذریعہ سندھیا کو جواب دیتے ہوئے لکھا کہ جب شکار کرنے پر پابندی نہیں تھی ، اس وقت میں اور مادھوراﺅ سندھیا شیرکا شکار کیا کرتے تھے۔ اندرا جی کے وائلڈ لائف کنجرویشن ایکٹ لانے کے بعد سے اب صرف شیر کا فوٹو ہی کھینچتا ہوں۔وہیں اس ٹویٹ سے کچھ یوزرس یہ بھی کہہ رہے ہیں کہ کیا اب دگوجئے سنگھ پنجرے میں اس ٹائیگر کو قید کریںگے،یاصرف ریاست میںکارنامہ دکھائےں گے۔ ویسے تو دلیلیں کچھ بھی دی جاسکتی ہے لیکن اتنا تو طے ہے کہ شیوراج کے کابینہ توسیع کے بعد کئی باتیں کھل کر سامنے آنے لگی ہےں۔ جس میں ایک طرف تو پارٹی پر دبدبے کی بات اور دوسری طرف کابینہ میں ان کے حامیوں کی اضافی تعداد۔ خیر قیاس آرائیوں کے بیچ اب یہ دیکھنا دلچسپ ہے کہ کیا محض کہنے کو یہ باگ ڈور شیوراج کے ہاتھوں میں ہے یا اعلیٰ کمان نے کچھ الگ سوچ رکھا ہے۔