کابینہ توسیع: کانگریس نے شیوراج اور سندھیا کو گھیرنا کیا شروع


بھوپال:2جولائی (نیانظریہ بیورو)
شیوراج کابینہ توسیع ہوتے ہی اپوزیشن نے وزیراعلیٰ شیوراج اور راجیہ سبھا ممبر جیوتی رادتیہ سندھیا کو گھیرنا شروع کردیا ہے۔ سوشل میڈیا سے لے کر سڑک تک کانگریس کے ذریعہ حملے بولے جارہے ہیں۔ خاص کر اپوزیشن کے ذریعہ سابق ایم ایل ایز کو شامل کرنے کی وجہ سے سینئر ایم ایل ایز کی کابینہ میں کی گئی اندیکھی کو مدعہ بنایا جارہا ہے۔ اتنا ہی نہیں سابق وزیر اور کانگریس ایم ایل اے جیتو پٹواری نے تو سندھیا کے ٹویٹ ”ناانصافی کے خلاف چھیڑی گئی جنگ ہی مذہب ہے“پر ری ٹویٹ کرکے لکھا ہے کہ دھوکہ دینا سب سے بڑا ”ادھرم “ ہے۔ جنہوں نے سالوں تک عوام کا استحصال اور ناانصافی کی ہے،انہیں ناانصافی سمجھانے کا حق نہیں ۔جیتو پٹواری نے لکھا ہے کہ موقع پرستوں کی بھیڑ کی وجہ سے راجیندر شکلا ، سنجے پاٹھک ، پارس جین ،سریندر پٹوا،گوری شنکر بسین ، رام پال سنگھ،جالم سنگھ پٹیل اب سمجھ گئے ہوں گے کہ جب ’جے چندوں‘کو پارٹی میں لایا جاتا ہے تو پارٹی کے دیگر لوگ کیسے کنارے ہوجاتے ہیں۔ عہدہ ، انتخابات آتے جاتے ہیں سیاسی ’مریادہ‘ کی ذمہ داری سب کی ہے۔ ریاست کی عوام کی پیٹھ پر وار کرنا ناانصافی ہے۔ ریاست کی عوام اور کانگریس کارکنان جد وجہدکے لئے تیار ہے۔ جیت عوام کی ہی ہوگی۔ اس کے ساتھ ہی سندھیا کے ٹویٹ پر کانگریس ایم ایل اے کنال چودھری نے بھی ری ٹویٹ کیا ہے ۔ چودھری نے لکھا ہے کہ ”دریودھن“کو بھی ایسا ہی لگتا تھا۔ چودھری نے مزید لکھا کہ 206منتخب ممبر لیکن غیر اعلانیہ، برخاست اور غیر ایم ایل ایز کا کابینہ میں جمہوریت کے منھ پر سیاہ دھبہ جیسا ہے۔ ہندوستان کی جمہوری تاریخ کی سب سے غیر جمہوری اور غیرقانونی کابینہ کا ریاست میں بننا شرمناک ہے۔ ٹویٹ میں چودھری نے شیوراج پر حملہ بولتے ہوئے لکھا ہے کہ ایسا کوئی قریبی نہیں جس کوانہوں نے دھوکہ نہیں دیا۔ اپنی کرسی بچانے کے لئے 35کروڑ میں فروخت ہوئے جے چندوں کو کابینہ وزیربنادیا اور اب اپنے راجیندر شکلا ، رام پال سنگھ،سریندر پٹوا،سنجے پاٹھک جیسے حامیوں کو گھر بٹھا دیا ۔