اب یشودھرا کی سالگر ہ کے پوسٹر سے جیوتی رادتیہ کا فوٹو ہوا غائب


بھوپال:19جون(نیانظریہ بیورو)
مدھیہ پردیش کی سیاسی گلیاروں میںہمیشہ کچھ نیا چلتا ہی رہتا ہے۔ کبھی پارٹی کے ذریعہ ایک دوسرے پر الزام تراشی تو کبھی پوسٹر میں چہرے کا نہ ہونا بھی سرخیاں بن جاتا ہے۔ اسی سلسلے میں بی جے پی کے پوسٹر سے سندھیا کے چہرے کا غائب ہونا ایک مرتبہ پھر بڑا مدعہ بن گیا ہے۔ یشودھرا راجے سندھیا کی سالگرہ پر شیوپوری میں لگے پوسٹر سے سندھیا کا فوٹوغائب ہونا کانگریس کے لئے ایک موقع بن گیا ہے۔ جس کی بنیاد پر ایک مرتبہ پھر کانگریس نے بی جے پی کو گھیرا ہے۔ دراصل ریاست کے شیوپوری ضلع میں جیوتی رادتیہ سندھیا کی بوا یشودھرا راجے سندھیا کی سالگرہ پر پوسٹر لگاکر انہیں مبارکباد دی گئی ۔ اس پوسٹر میں بی جے پی کے سینئر لیڈران کے چہرے ہیں لیکن اس میںجیوتی رادتیہ سندھیا غائب ہے۔ جس کے بعد کانگریس ترجمان نریندر سلوجا نے بی جے پی اور شیوراج حکومت پر نشانہ سادھا ہے۔ نریندر سلوجا نے ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ بوا کی سالگرہ پر رہائشی علاقہ شیوپوری میں ہی بھتیجا غائب ہے۔ اس کے ساتھ ہی سلوجا نے بی جے پی پر بڑا سوال کھڑا کیا ہے۔ حالانکہ یہ پہلا موقع نہیں ہے جب ریاست میں سندھیا کو بی جے پی نے اپنے پوسٹر سے درکنار کیا ہے۔ اس سے قبل بھی کئی مرتبہ ریاست میں بی جے پی کے پوسٹر میںسندھیا کو جگہ نہیں دی گئی ہے۔ غورطلب ہے کہ اس سے قبل مرکزی وزیر نریندر سنگھ تومر کی سالگرہ کے موقع پر شہر میں ہورڈنگ -پوسٹر لگائے گئے تھے۔ جس سے سندھیا کی فوٹو غائب تھا۔ پارٹی کے ہورڈنگ ،پوسٹر میں صرف نریندر سنگھ تومر کا فوٹو تھا اور مبارکباد کا پیغام تھا، جبکہ کارکنان کے ذریعہ لگائے گئے بیشتر ہورڈنگ، بینروں میں مرکزی وزیرنریندر سنگھ تومر کے فوٹو کے علاوہ وزیراعظم نریندر مودی،قومی صدر جے پی نڈا،وزیراعلیٰ شیوراج سنگھ چوہان اور ریاستی صدر وی ڈی شرما کے فوٹوتھے۔ اتنا ہی نہیں ان پر مرکزی وزیر تومر کے دونوں بیٹوں کے بھی فوٹو تھے لیکن جیوتی رادتیہ سندھیا کا فوٹو غائب تھا۔ جس کو لے کر شہر میں طرح طرح کی باتیں شروع ہوگئی تھی۔ اب بوا کی سالگرہ پر ایک مرتبہ پھر ہورڈنگ سے سندھیا کو غائب کردینا بڑاسوال کھڑا کررہا ہے۔