بی جے پی ایم ایل اے رگھوونشی نے ریاستی وزیر گووند سنگھ راجپوت پر لگائے سنگین الزام


بھوپال:16جون(نیانظریہ بیورو)
ایک طرف شیوراج حکومت کا دعویٰ ہے کہ مدھیہ پردیش میں ان کی حکومت بننے کے بعد کورونا وباءمیں بھی حکومت کسانوں کی فصل خریدنے میں ریکارڈ بنارہی ہے۔ جس سے ریاست کا کسان خوش ہے۔ دوسری طرف بی جے پی ایم ایل اے وریندر رگھوونشی نے ہی گیہوں خریدی میں ہوئی بدعنوانی کی پول کھول کر شیوراج حکومت کو بیک فوٹ پر لادیا ہے۔ بی جے پی ایم ایل اے کے ذریعہ بدعنوانی کے الزام لگائے جانے کے بعد کانگریس شیوراج حکومت پر حملہ آور ہوگئی ہے۔ کانگریس کا الزام ہے کہ ہم اس بات کو پہلے ہی کہتے رہے ہیں کہ گیہوں خریدی میں زبردست بدعنوانی کی جارہی ہے۔ کانگریس کا کہنا ہے کہ بی جے پی کے ایم ایل اے وریندر رگھوونشی نے ان تمام الزامات کو ثابت کردیا ہے۔ اب وزیراعلیٰ کو اس معاملے میں اپنی حکومت کی حالات واضح کرنے چاہئے۔ ریاست کی عوام ایسی بد عنوان بی جے پی حکومت کو کبھی معاف نہیں کرےگی۔دراصل بی جے پی ایم ایل اے وریندر رگھوونشی نے گیہوں خریدی میں ہورہی بدعنوانی کو لے کر اپنی ہی حکومت کو آڑے ہاتھوں لیا ہے۔ انہوں نے کوآپریٹیو وزیر گووندسنگھ راجپوت پر سنگین الزام لگائے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ گیہوں خریدی میں کسانوں سے 10روپے فی کونٹل لیا جارہا ہے ۔ کسانوں سے ایک ہزار روپے سرویئر اور گودام والے اس بات کا لے رہے ہیں کہ گیہوں گیلا ہے، حقیقت یہ ہے کہ کسانوں کے ساتھ کوآپریٹیو محکمہ والوں نے لوٹ مچائی ہوئی ہے۔ بی جے پی ایم ایل اے رگھوونشی نے کہا کہ مجھے یہ کہتے ہوئے کوئی جھجھک نہیں ہے کہ کوآپریٹیو وزیر گووندسنگھ راجپوت ضمنی انتخابات
کی فکر چھوڑ کر کسانوں کی فکر کرلیں۔ ضمنی انتخابات میں تو شیوراج سنگھ اور کمل کے پھول کے نام پر جیت جائیںگے، لیکن کسانوں کے ساتھ ہورہی بند عنوانی کی وجہ سے پریشانی ہوجائے گی۔