دہلی جامع مسجد کے امام سید احمد بخاری کے پی آراو کا کورونا سے انتقال

دہلی کی تاریخی جامع مسجد کے شاہی امام سید احمد بخاری کے پی آر او یعنی رابطہ عامہ افسر امان اللہ کا منگل کی دیر رات کورونا انفیکشن کی وجہ سے انتقال ہو گیا۔ اس خبر نے عوام و خواص کے درمیان خوف کا ماحول پیدا کر دیا ہے اور فکر اس بات کو لے کر بھی ہے کہ امان اللہ جامع مسجد واقع دفتر میں ہی رہتے تھے اور ایسے ماحول میں عوام کے لیے مسجد کا دروازہ کھلا رکھنا خطرے سے خالی نہیں ہے۔ بحرانی حالات کے پیش نظر اس بات پر غور کیا جانے لگا ہے اور علماء حضرات آپس میں مشورہ بھی کر رہے ہیں کہ جامع مسجد ہی نہیں، دہلی کی دیگر مساجد میں بھی عوام کے داخلے پر پابندی لگائی جائے یا نہیں، کیونکہ ریاست میں کورونا انفیکشن کے معاملے لگاتار بڑھتے ہی جا رہے ہیں۔

معروف صحافی فرحان یحیٰ نے سید احمد بخاری کے پی آر او امان اللہ کے انتقال اور مسجدوں میں نماز کی ادائیگی کے تعلق سے علماء کے درمیان ہو رہے مشوروں پر مبنی ایک ویڈیو اپنے یو ٹیوب چینل ‘ہندوستان لائیو’ پر اَپ لوڈ کی ہے جس میں سید احمد بخاری اور فتح پوری مسجد کے شاہی امام مفتی مکرم کی بات چیت بھی شامل ہے۔ اس بات چیت سے اندازہ ہوتا ہے کہ سید احمد بخاری اور مفتی مکرم اس بات کو لے کر بہت سنجیدہ ہیں کہ مسجدوں کے دروازے عام لوگوں کے لیے کھلے رکھنے سے کورونا کے پھیلاؤ کو روکنا مشکل ہوگا، اور بہتر یہی ہے کہ جس طرح پہلے صرف مسجد انتظامیہ کے افراد نمازیں ادا کرتے تھے، ویسے ہی کریں۔ لیکن اس سلسلے میں دونوں ہی علماء نے حتمی طور پر کوئی بھی فیصلہ نہیں کیا ہے اور کہا ہے کہ علماء و معزز حضرات سے مشورہ کے بعد ہی کوئی قدم اٹھایا جائے گا۔