ووٹنگ کی تیاریاں شروع ،ممبرانِ اسمبلی کےلئےجاری ہوئیں ہدایات

راجیہ سبھا انتخابات:

بھوپال:6جون(نیانظریہ بیورو)
ریاست میں کورونا وائرس کی حالت مسلسل بگڑتی جارہی ہے ، کیوں کہ راجدھانی میں ہر روز متاثرہ مریضوں کی تعداد بڑھ رہی ہے ، پھر راجیہ سبھا کے لئے اسمبلی میں19 جون کوممبران اسمبلی کو ووٹ ڈالنا ہے ، اسمبلی میں تیاریوں کا آغاز کردیا گیا ہے۔ ، اسمبلی سیکرٹریٹ کے ذریعہ چوبیس گھنٹے عملہ انتظامات میں لگا ہوا ہیں۔ یہ پہلا موقع ہوگا جب اس طرح کے انفیکشن کے عالم میں راجیہ سبھا انتخابات ہو رہے ہیں ، حالانکہ راجیہ سبھا کے لئے گزشتہ 26 مارچ کوہی ووٹ ڈالنا تھا ، لیکن ریاست میں 24 مارچ کو ہی مکمل طورپرلاک ڈاو¿ن نافذ کیا گیا تھا۔ اس کی وجہ سے ، راجیہ سبھا انتخابات نہیں ہوسکے۔
ریاست میں 19 جون کو ہونے والے راجیہ سبھا انتخابات میں پولنگ کے مقام پر صرف 22 ارکان اسمبلی کو داخلہ دیا جائے گا۔ اس دوران ، تمام اراکین اسمبلی کو بھی سوشل ڈسٹینس کا خاص خیال رکھنا ہو گا ، ایم ایل اےزکو بیلٹ پر امیدوار وںکے نشانات دکھیں گے ، لیکن ایک امیدوار کو صرف ایک نمبر دے سکے گا۔ پہلی ترجیح کےلئے ایک ہی نمبرکودو یا زیادہ امیدواروں کولکھاگیاتو پھر ووٹ غلط ہوگا۔
206 ایم ایل اےز ووٹ ڈالنے کے ہیں اہل:
اسمبلی سکریٹریٹ نے راجیہ سبھا انتخابات کے لئے اپنی تیاریوں کو تیز کردیا ہے۔ تمام اراکین اسمبلی کو معلومات بھیجی جارہی ہیں۔ بیلیٹ پیپربھی چھپ چکے ہیں ، جنہیں اسمبلی کے اسٹرانگ روم میں محفوظ رکھا گیا ہے اور ان پر 24 گھنٹے نگرانی بھی کی جارہی ہے۔ راجیہ سبھا انتخابات کے لئے مدھیہ پردیش ممبران اسمبلی کے 206 ارکان ووٹ ڈالنے کے اہل ہیں ، جب کہ تقریباً 250 بیلٹ پیپرچھاپے گئے ہیں۔
صرف ایم ایل اےز کو ہی ملے گا داخلہ:
راجیہ سبھا انتخابات کے لئے ، اسمبلی کے سینٹرل ہال میں رائے دہندگی کا عمل مکمل ہوگا ، یہاں پر ووٹنگ کے لئے باکس لگادئے گئے ہےں۔ ان کے پاس بی جے پی ، کانگریس ، بہوجن سماج پارٹی اور ایس پی سیاسی جماعتوں کے 4 نمائندے ہوں گے ، متعلقہ پارٹی کے ایم ایل اےز اپنی پارٹی کے نمائندے کا ووٹ دکھا کر ووٹ دیں گے۔ اگر ایم ایل اے نے اپنی پارٹی کے علاوہ کسی پارٹی کے نمائندے کو بیلٹ دکھایا تو اسے باطل قرار دے دیا جائے گا۔ صرف وہ اراکین اسمبلی جو راجیہ سبھا انتخابات کے لئے ووٹ ڈالنے جارہے ہیں انہیں اسمبلی میں داخلہ دیا جائے گا ، ان کے بندوق بردار یا نجی عملے کو اسمبلی احاطے میں آنے دیاجائے گا۔ لیکن اسمبلی میں داخلہ نہیں دیا جائے گا۔
یہ سہولیات اسمبلی میں ہوں گی:
معلومات کے مطابق ، اس مرتبہ اسمبلی کے چیف سکریٹری ، اے پی سنگھ کی طرف سے پہلے ہی ہدایات دی جاچکی ہیں کہ وہ اسمبلی میں کورنا وبا کے انفیکشن کی روک تھام سے متعلق پیرامیٹرز پر عمل کرنے کے لئے ہر طرح کے انتظامات کریں۔ اس کے علاوہ اسمبلی میں موجود تمام اراکین اسمبلی کے ہاتھوں میں پہننے کے لئے دستانے ، چہرے اور ہاتھوں پر لگانے کے لئے ماسک رکھنے کا انتظام کیا جائے گا۔