بی اے فائنل کی طالبہ منریگا کے تحتمزدوری کرنے پرمجبور

لاک ڈاون کی مجبوری:

بھوپال:4جون(نیانظریہ بیورو)
ملک بھر میں گزشتہ ڈھائی مہینوں سے لاک ڈاو¿ن نافذ ہے۔ ملک میں اچانک اس لاک ڈاو¿ن کی وجہ سے معاشرے کا ہر طبقہ معاشی بحران کا شکار ہے۔ اسی کے ساتھ لوگوں نے کبھی سوچا بھی نہیں تھا کہ زندگی میں کسی نہ کسی موڑ پرکسی خوفناک انداز میں انہیں اس قسم کی پریشانی کا سامنا کرنا پڑے گا۔ کورونا انفیکشن کی روک تھام کے لئے ملک بھر میں ڈھائی ماہ تک جاری لاک ڈاو¿ن نے لوگوں کی زندگی کو تبدیل کردیا ہے۔ اسی طرح کی ایک تصویر راجدھانی بھوپال سے 30 کلومیٹر دور پاٹنی گاو¿ں سے آئی ہے ، جہاں تعلیم یافتہ خواتین مزدوری کاکام کرنے پر مجبور ہے۔
لاک ڈاو¿ن نے کیامزدوری کرنے پرمجبور:
لاک ڈاو¿ن کے دوران ، ملک بھر سے ایسی بہت سی تصاویر سامنے آئیں ہیں، جنہوں نے لوگوں کو چونکا دیا۔ ملک میں تارکین وطن مزدوروں کی قابل رحم حالت کسی سے پوشیدہ نہیں ہے۔ پاٹنی گاو¿ں میں رہنے والی روینہ منریگا اسکیم کے تحت گاو¿ں میں کام کرتی ہیں۔ روینہ کے ساتھ ، اس کی دو بہنیں بھی اپنے کنبوں کی کفالت کے لئے مزدور کی حیثیت سے کام کر رہی ہیں۔ روینہ ، جو اپنے گاو¿ں سے دور تھی اور سرکاری ملازمت کی تیاری کر رہی تھی ،لیکن لاک ڈاو¿ن میں اپنے گاو¿ں لوٹی اور لاک ڈاو¿ن کے دوران اپنے کنبے کی مدد کے طور پر کام کرنے پر مجبور ہوگئی۔
روینہ نے بتایا کہ لاک ڈاو¿ن سے پہلے وہ گاو¿ں سے دور تھی اور سرکاری امتحان کی تیاری کر رہی تھی۔ اس دوران روینہ نے ایس ایس سی کا امتحان بھی پاس کیا۔ لیکن روینہ نے ہمت نہیں ہاری۔ حوصلے تب بھی اونچے تھے اور روینہ نے اعلی سرکاری امتحان کی تیاری جاری رکھی ، لیکن لاک ڈاو¿ن کے بعد اسے اپنے گاو¿ں واپس آنا پڑا۔
روینہ نے بتایا کہ ان دو مہینوں میں گھر کی صورتحال ایسی ہوگئی کہکئی راتیں بغیر کھائے پیئے گزارنی پڑیں۔ روینہ کے لئے ایسی حالت میں اپنے بہن بھائیوں کو دیکھنا مشکل ہوگیا، لہذا اپنے کنبے کی حالت دیکھ کر اس نے گاو¿ں کے سرپنچ سے کام مانگا۔ تاہم ، اس وقت روینہ کو کام نہیں ملا تھا ، لیکن اس دوران یہ گاو¿ں ایم این آر ای جی اے کے تحت کام کرنے آیا تھا ، جس میں گاو¿ں کی بہت سی خواتین نے کام کرنا شروع کیا تھا۔ ادھر ، روینہ نے بھی منریگا کے تحت کام کرنا شروع کردیا۔
آئی ٹی آئی نے بھی نہیں آیاکام :
روینہ نے بتایا کہ انہوں نے کام کی تلاش میں آئی ٹی آئی بھی کی ہے ، لیکن آئی ٹی آئی میں کوئی خالی جگہ نہیں ملی۔ جس کے بعد اس نے اوپن یونیورسٹی میں تعلیم حاصل کرنا شروع کی اور سرکاری ملازمت کی تیاری کے لئے گاو¿ں سے باہر چلی گئی۔ روینہ ابھی بھی آخری سال کی طالبہ ہیں ، اس دوران کام کرنا ان کے لئے آسان نہیں ہے۔ لیکن کوئی کام بڑا یا چھوٹا نہیں ہوتا ہے۔ یہ سوچ کر ، روینہ اپنے گھر والوں کا سہارا بننے کے لئے ایک مزدور کی حیثیت سے کام کر رہی ہیں۔
روینا نے بتایا کہ ایک وقت تھا جب پڑھنے کے لئے کتاب اور قلم موجود نہیں تھے۔ لیکن مجھے پڑھنے کا شوق تھا ، اسی وجہ سے میں نے پڑھنا نہیں چھوڑا۔ روینہ بی اے کی آخری سال کی طالبہ ہے۔
روینہ نے بتایا کہ ان کے والدین کو ان کا پورا تعاون حاصل ہے۔ روینا کے والد گھر پر بیمار ہیں ، جس کے لئے روینہ کو مزدور کی حیثیت سے کام کرنا پڑا ہے اور کنبہ لاک ڈاو¿ن کی وجہ سے بھوکا ہے ، لہذا روینہ منریگا کے تحت کام کرتی ہے۔ نیز ، اگر اسے کسی کھیت میں کام مل جاتا ہے تو وہ کچھ رقم کمانے کے لئے بھی کام کرتی ہے۔ لاک ڈاو¿ن کے دوران مزدور کی حیثیت سے کام کرنے والی روینہ ہر ایک کے لئے ایک مثال ہے۔ روینہ کا ماننا ہے کہ کوئی بھی کام چھوٹا یا بڑا نہیں ہے۔ اگر اسپرٹ میں پرواز ہے ، تو آپ کسی بھی مشکل صورتحال سے لڑیں گے۔ روینہ آج کے نوجوانوں کے لئے ایک مثال ہے۔