اپنی ناکامی کوچھپانے کےلئے بی جے پی افسران کو کالا انگریز کہہ کر شرمندہ نہ کریں:جیتوپٹواری


بھوپال:یکم جون(نیانظریہ بیورو)
مدھیہ پردیش کے افسران کو کھلے طور پر دھمکی دینے کے بعد ریاست کی کانگریس پارٹی کے کارگزارصدر جیتو پٹواری نے زرعی وزیر کمل پٹیل پر جوابی حملہ کیا ہے۔ پٹواری نے کہا کہ کمل پٹیل کو کام کی بات کرنا چاہئے اور کسانوں کے لئے انتظام کرنا چاہئے۔ اپنی ناکامی کوچھپانے کے لئے وہ آئی اے ایس افسران کو کالا انگریز کہہ کر شرمندہ نہ کریں۔ انہوں نے وزیراعلیٰ سے مطالبہ کیا ہے کہ حکومت کو ایسے بے صلاحیت شخص کو کابینہ سے فوری طور پر برخاست کردینا چاہئے۔ پٹواری نے سوال کیا کہ شیوراج جی یہ بھی بتائیں کہ کیا رنگوں کی بنیادپرافسران سے امتیازی سلوک کرنا ان کی حکومت کی پالیسی کا حصہ ہے؟ پٹواری نے مطالبہ کیا کہ کمل پٹیل اگر وقت پر باردانے کا انتظام نہیں کرپاتے ہیں تو ریاست کے کسان ان کا رنگ سدھار دیں گے۔ کمل ناتھ جی کی حکومت میںصلاحیت کی قدر تھی کالے یا گورے کی بنیاد پر وہاں فیصلے نہیں ہوتے تھے۔ صرف سرخیوں میں رہنے کے لئے اس طرح کی بیان بازی کرنا افسران طبقہ کو شرمندہ کرنا ہے۔
کمل پٹیل کو چاہئے کہ کوری بیان بازی کرنے کے بجائے وہ دیکھیںکہ دوسری ریاستوں کے غریبوں کا گیہوں مدھیہ پردیش کے پیداوار کا حصہ نہ بن جائے۔ جیسا ساگر سرخی علاقے میں ہوتا ہے۔ پی ڈی ایس کا چاول بی جے پی کے کارکنان کے ویئرہاﺅس نہ پہنچنے جیسا مندسور میں ہوا ہے۔ آج اس وباءکو موقع جان کر عوام کا راشن لوٹنے والوں پر نکیل کسنے کی ضرورت ہے نہ کہ صرف بیان بازی کرنے کی۔جیتو نے مزید کہا کہ پوری ریاست میں پیداوار کا تو شور مچایا جارہا ہے، لیکن باردانے کی قلت دور نہیں کی جارہی ہے۔ زرعی وزیر پٹیل ایک طرف خود باردانہ کم ہونے کی بات کو قبول کر مرکز کو ذمہ دار ٹھہرا رہے ہیں ، وہیں دوسری طرف کوآپریٹیو وزیر گووندسنگھ راجپوت باردانے کی کمی کو سرے سے خارج کررہے ہیں اور ان دونوں وزراءکے جھگڑے میں کسان برباد ہورہے ہیں۔اسے تین تین دنوں تک لائن میں کھڑے ہونے کے لئے مجبور ہونے پڑرہا ہے۔ اس سخت گرمی میں بغیر کھانا،پانی کے انتظام کے کسان ہی ہےںجو اس طرح لائن میں لگے ہیں۔