افغانستان پر طالبان کے قبضے کے بعد منشیات کی دہشت گردی میں اضافے کا خطرہ بھارت کو کئی سالوں سے منشیات کی دہشت گردی کا سامنا ہے۔ ماہرین

نئی دلی۔ 30 دسمبر۔ منشیات اور دہشت گردی کے درمیان یہ گٹھ جوڑ ہندوستان کی سلامتی پر سنگین اثرات مرتب کرتا ہے۔ ایران، افغانستان اور پاکستان پر مشتمل گولڈن کریسنٹ غیر قانونی افیون کا سب سے بڑا پروڈیوسر ہے اور ان علاقوں سے ہندوستان کی قربت اسے درپیش خطرات میں اضافہ کرتی ہے۔ اور اب افغانستان پر طالبان کے قبضے کے بعد یہ اور بھی زیادہ تشویش کا باعث بن گیا ہے۔منشیات کی پوری غیر قانونی تجارت طالبان کے کنٹرول میں ہے، جو پاکستان کے انٹیلی جنس ایجنٹوں، فوجی افسران اور سیاستدانوں کے ساتھ مل کر کام کرتے ہیں۔ اس سال افغانستان کی حکومت کے خاتمے اور کابل پر طالبان کے قبضے کے بعد، ہندوستانی سیکورٹی ایجنسیوں نے ہندوستانی بندرگاہوں اور سرحدوں پر افغانستان اور پاکستان سے غیر قانونی طور پر لائی جانے والی منشیات کو پکڑ لیا ہے۔ ملک کے اندر بھاری ذخائر سمگل ہونے کے ساتھ غیر قانونی منشیات کی تجارت میں اضافہ ہوا ہے۔19 دسمبر کو، ایک پاکستانی ماہی گیری کی کشتی ‘ الحسینی’ عملے کے چھ ارکان کے ساتھ اور تقریباً 400 کروڑ روپے مالیت کی 77 کلو گرام ہیروئن لے کر گجرات کے ساحل سے ہندوستانی پانیوں میں پکڑی۔ کراچی میں رجسٹرڈ کشتی یہ کھیپ لے کر جا رہی تھی کہ بھارت میں ان کے گاہکوں کو پہنچائی جائے۔ یہ مشترکہ آپریشن انڈین کوسٹ گارڈ (ICG) نے گجرات کے انسداد دہشت گردی اسکواڈ (ATS) کے ساتھ کیا تھا۔گزشتہ تین مہینوں میں آئی سی جی اور گجرات اے ٹی ایس کا یہ دوسرا مشترکہ آپریشن تھا جس میں کل 550 کروڑ روپے کی ہیروئن ضبط کی گئی ہے۔سرکاری اعداد و شمار کے مطابق، گزشتہ تین سے چار سالوں میں گجرات کے ساحل کے ساتھ اسمگل کی گئی 30,000 کروڑ روپے سے زیادہ کی منشیات کو ضبط کیا گیا ہے۔26 دسمبر کو، بی ایس ایف کے اہلکاروں نے پنجاب کے فیروز پور سیکٹر میں دو الگ الگ واقعات میں 200 کروڑ روپے کی 40 کلو گرام ہیروئن برآمد کی۔ پہلے واقعے میں، فوجیوں نے سرحدی علاقے کے قریب زمین سے کسی چیز کے ٹکرانے کی آواز سنی۔ جب بی ایس ایف اہلکاروں نے علاقے کی تلاشی لی تو انہوں نے سرحدی چوکی میاں والی اتر کے قریب 22 پیکٹوں میں چھپائی گئی 34 کلو گرام ہیروئن برآمد کی۔