بے حدضروری ہونے پر ہی باہر نکلیں،جمعہ کوبھی ظہرکی نماز گھرپرپڑھیں

بے حدضروری ہونے پر ہی باہر نکلیں،جمعہ کوبھی ظہرکی نماز گھرپرپڑھیں
مرکز نظام الدین نے حکومت کی ہدایت پرعمل کیا،میڈیااس کوفرقہ وارانہ رنگ نہ دے:سیدمشتاق علی ندوی
بھوپال:02اپریل(نیانظریہ بیورو)ایک بات خاص طور پر کہنا پڑرہی ہے کہ جماعت کے ساتھ جو معاملات چل رہے ہیں اس سے لوگوں کوبالخصوص مسلمانوں کو غلط فہمی کا شکار نہیں ہونا چاہئے ، یہ کہنا غلط ہے کہ جماعت کے افراد وہاں چھپے ہوئے تھے،اس کوچھپے ہوئے نہیں کہہ سکتے ،کیوں کہ حکومت نے اعلان کیاتھا کہ جوجہاں ہے وہیں رک جائے۔توپھرجولوگ حکومت کی ہدایت پرعمل کرتے ہوئے وہیں رک گئے ۔لیکن میڈیا نے اپنی منفی سوچ کوفروغ دیتے ہوئے اسے باقاعدہ پروپیگنڈہ بنایا،میڈیااہلکاروں کواس سے باز آناچاہئے۔ یہ حکومت کی طرف سے آرڈر آیا تھا کہ جولوگ جہاں ہیں وہیں رک جائیں۔ جولوگ وہاں رک گئے تھے ،اب حکومت کوچاہئے کہ وہ ان تمام لوگوں کا میڈیکل چیک اپ کرائے ،لیکن اس میں تاخیرکی گئی،اب جب میڈیکل چیک اپ ہورہاہے اس میں کوئی مثبت معاملہ دیکھنے میں نہیں آیا۔میں تمام لوگوں سے کہنا چاہتاہوں کہ جماعت کے تعلق سے جوباتیں سامنے آرہی ہیں اس سے خوفزدہ نہ ہوں اور افواہوں پر توجہ نہ دیں۔بلکہ اس وقت میڈیا کہ ذمہ داری تھی وہ حقائق کی روشنی میں بات کرتی،لیکن کچھ منفی سوچ کے لوگوں کوصرف فرقہ وارنہ نفرت پھیلانے میں مزہ آتاہے،ایسانہیں ہوناچاہئے۔میڈیا کی ذمہ داری ہے کہ وہ حکومت کی ہدایت پرغورکرتی پھرکسی پرکوئی تبصرہ کرتی،ایسانہیں کیاگیابلکہ ایک ایسی جماعت جوصرف لوگوں کواللہ کی طرف آنے کی دعوت دیتی ہے اس پرطنزکیاگیا،یہ سراسرغلط ہے۔مذکورہ بالاخیالات کااظہار شہرقاضی مولاناسیدمشتاق علی ندوی نے بروزجمعرات روزنامہ نیانظریہ کے نمائندے کے سامنے مرکز کے تعلق سے میڈیاکے ذریعہ غلط تشہیرپرروشنی ڈالتے ہوئے اپناموقف سامنے رکھا۔اس دوران قاضی صاحب نے مزید فرمایاکہ کل جمعہ کادن ہے۔میری لوگوں سے اپیل ہے کہ گزشتہ جمعہ کی طرح اس جمعہ کوبھی نماز ظہراپنے گھروں میں اداکریں۔مسجد صرف امام،مو¿ذن،صدرسکریٹری اورخزانچی ہی نمازاداکریں۔اورخوب روروکراللہ سے توبہ کریں اوراس بیماری سے ملک اوردنیا کی حفاظت کے لئے دعاکریں۔اوربلاضرورت کوئی بھی شخص گھروں سے باہر نہ نکلیں۔اللہ تعالی تمام انسانوں کواپنے حفظ وامان میں رکھے۔

شب برات میں بھی قبرستان جانے سے کریں گریز :
اس وقت ملک میں جوکوروناوائرس کی وباپھیلی ہوئی ہے۔اورگزشتہ کئی روز سے ملک میں لاک ڈاو¿ن ہے۔کہیں بھی بھیڑجمع کرنے کی اجازت نہیں ہے۔اس کودیکھتے ہوئے میں قاضی صاحب نے تمام مسلمانوں سے درخواست کی ہے کہ وہ شب برا¿ت میں بھی قبرستان نہ جائیں،بلکہ اپنے گھروں میں نماز،تلاوت ودیگرعبادات کااہتمام کریں اوراپنے مرحومین کے لئے دعائے مغرفت کریں۔ساتھ ہی لوگوں سے گزارش ہے کہ اس وقت اپنے محلے کے غریبوں کی مددکے لئے مستعدرہیں۔اگرآپ رمضان المبارک میں زکوة اداکرتے ہیں توآپ رمضان کاانتظارنہ کریں،بلکہ یہ اچھاموقع ہے کہ وقت پرلوگوں کی مددہوجائے،جوغریب ہےں،نادارہیں،مسکین ہیں،ضرورت مندہیں اورمستحق ہیں توایسے ضرورت مندوں کی اس وقت مددکرنازیادہ ثواب کاکام ہے۔لہذا جولوگ خدمت کے میدان میں فریضہ انجام دے رہے ہیں ان کوبھی چاہئے کہ ایسے غریب مسکین کوتلاش کران کی مددکریں اورضرورت مندوں تک پہنچیں۔تمام لوگ گھروں میں ہی مرحومین کے لئے دعائے مغفرت کریں اورجنتا زیادہ سے زیادہ ہوسکے اس مصیبت سے چھٹکارے کے لئے دعاکریں۔