جمعیة علما کی پہلی کوشش ہے کہ سرکاری سطح پر ہی ان مقدمات کی واپسی ہو:حاجی محمدہارون


بھوپال:28مئی(پریس ریلیز )
جمعیة علماءمدھیہ پردیش کے صدر حاجی ہارون نے ایک پریس ریلیز جاری کرتے ہوئے کہا کہ جمعیت علماءہند کے جنرل سکریٹری حضرت مولانا محمود اسد مدنی کی ہدایات پر پورے ملک میں صوبائی جمعیت تبلیغی جماعت سے متعلق مقدمات کی سرکاری اور عدالتی سطح پر پیروی کرنے میں لگی ہوئی ہے ۔ جمعیت علمائے ہند کی پہلی کوشش ہے کہ سرکاری سطح پر ہی ان مقدمات کی واپسی ہو اور اگر عدالتوں میں ان مقدمات کو لڑنا پڑے تو مضبوتی سے لڑا جائے ۔فی الحال جمعیت علماءہند کی ہدایت پرریاستی جمعیت علماءکے ذریعے انگلینڈ کے 12 افراد سہیل حق،قاضی دلاور حسین،طلحہ صدیقی،زاہد کبیر،سفون حسین خان،محسن احمد،شمس القمر حیات،مرزا عمران بیگ،ایوب اسماعیل داو¿د،شمشیر خان،سہیل شیخ،صدیق احمد چودھری شامل ہیں۔ جمعیت کی ہدایت پر بھوپال کے نامور وکیلوں کی ایک ٹیم کر رہی ہے جس میں بھوپال کے نامور وکیل جناب سید ساجد علی ایڈووکیٹ، محبوب انصاری ایڈووکیٹ، ایس ایس سجی ایڈووکیٹ،حفظ الرحمن صدیقی ایڈووکیٹ اور محمد کلیم خان ایڈوکیٹ شامل ہیں۔ اسی طرح شیوپور،گوالیار میں بنگلہ دیش کے افراد سے متعلق مقدمات کی پیروی کی بھی جمعیت علماءمدھیہ پردیش کرے گی۔
حاجی ہارون نے آگے کہاکہ ہمیں عدالتوں سے انصاف ملنے کی پوری امید ہے لیکن ہم ساتھ ہی بھارت سرکار اور صوبائی حکومت سے پھرمطالبہ کرتے ہیں کہ ان مقدموں کو واپس لیا جائے اور جن ملکوں کے یہ شہری ہیں انہیں باعزت طریقے سے اپنے اپنے ملکوں کو واپس بھیجا جائے اور ایک اچھی مثال پیش کی جائے ۔