ضمنی انتخابات: شیوراج ایک بڑا ماسٹر اسٹروک لگانے کی تیاری میں


بھوپال:11مئی(نیانظریہ بیورو)
مدھیہ پردیش میں اقتدار میں رہ کر شیوراج کی بدعنوانی کی جانچ کرانے والی سابقہ کمل ناتھ حکومت اب شیوراج حکومت کے نشانے پر آگئی ہے۔ خبر ہے کہ شیوراج حکومت جلد ہی کمل ناتھ حکومت میں ہوئی بدعنوانیوں کی جانچ کی تیاری میں مصروف ہے۔ خاص کر کسانوں کی قرض معافی اور تبادلے کو لے کر۔ اس کی طرف خود وزیرداخلہ نروتم مشرا نے اشارہ کیا ہے۔ مشرا نے کانگریس حکومت کی دوراقتدار میں ہوئی بدعنوانیوں کی جانچ کے لئے گروپ آف منسٹرس کی کمیٹی بنانے کی وزیراعلیٰ شیوراج سنگھ چوہان سے مطالبہ کیا ہے۔ دراصل ضمنی انتخابات سے قبل حکومت کا یہ قدم ماسٹر اسٹروک ثابت ہوسکتا ہے۔ کیونکہ اقتدار سے ہٹنے کے بعد سے ہی کانگریس سندھیا اور بی جے پی کو نشانے پر لئے ہوئے ہیں، ایسے میں کانگریس کی بدعنوانی سامنے لاکر بی جے پی بڑا داﺅ کھیل سکتی ہے۔ بی جے پی کی اس رویہ سے کانگریس میں ہلچل پیدا کردی ہے۔ کانگریس خوب پلٹوار کررہی ہے۔ ذرائع کے مطابق بی جے پی کانگریس حکومت کے آخری 6مہینے میں ہوئے فیصلوں کی جانچ کرانے کی تیاری کررہی ہے۔ حکومت کو شبہ ہے کہ اقتدار جانے سے قبل سابقہ کمل ناتھ حکومت نے غلط طریقے سے فیصلے لے کر بدعنوانی کو فروغ دیا ہے۔ کابینہ کی میٹنگ میں وزراءنے وزیراعلیٰ سے سابقہ کانگریس حکومت میں ہوئی بدعنوانیوں کی جانچ کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔
ڈاکٹر نروتم مشرا نے بتایا کہ کانگریس حکومت کی دوراقتدار کے دوران ہوئی بدعنوانیوں کی جانچ کا مطالبہ کیا ہے۔ اس کے لئے گروپ آف منسٹرس کی کمیٹی بنانے کا وزیراعلیٰ شیوراج سنگھ چوہان سے مطالبہ کیا ہے۔ وزیر نے مزید بتایاکہ سابقہ حکومت میں تبادلہ صنعت شروع ہوا تھا ، جس میں بڑی سطح پر لین دین کی گئی تھی۔ اس کے علاوہ آخری وقت میں لئے گئے فیصلوں میں بھی بدعنوانی ہونے کا خدشہ ہے۔ ایسے میں اب حکومت چاہتی ہے کہ پورے معاملے کی جانچ کر عنصر کا پتہ لگا یا جائے ۔ وہیں انہوں نے کہا کہ اب ہر منگل کو کابینہ کی میٹنگ ہوگی۔