بھوپال سے جموں و کشمیر کے 458 طلبا کلکٹر کی موجودگی میں ہوئے روانہ


بھوپال:10مئی(نیانظریہ بیورو)
لاک ڈاو¿ن کے مشکل حالات کے پیش نظر انتظامیہ نے راجدھانی میں پڑھائی کرنے والے جموںکشمیر کے نوجوانوں اور مختلف علاقوں میں کام کرنے والے افراد کو جموں کشمیر واپس بھیجنے کا فیصلہ لیا۔ اسی دوران ، ریاست کے وزیر اعلی شیوراج سنگھ چوہان نے ان نوجوانوں کو وطن پہنچانے کا عزم کیا ہے اور اس مشکل صورتحال میں نوجوانوں کو جموں و کشمیر لے جانے کاانتظام کیاگیا۔
طلباءنے وزیراعلیٰ کااداکیا شکریہ:
معلوم ہوکہ تمام کشمیری نوجوانوں نے مدھیہ پردیش حکومت اور وزیر اعلی شیوراج سنگھ چوہان کا شکریہ ادا کیاہے۔بھوپال کے 324 نوجوانوں کو جموں روانہ کیا گیا۔ اس موقع پر کلکٹر ترون پتھوڑے ، ڈی آئی جی ارشاد ولی ، کارپوریشن کمشنر وجئے دتہ ساگر پبلک اسکول گاندھی نگر پہنچے اور انتظامات کو دیکھا اور سب کو بھوپال سے بحفاظت روانہ کیا۔ کشمیری طلبا کو بھیجنے سے پہلے تمام بسوں کی سینیٹائزنگ کی گئی تھی ، ساگر پبلک اسکول انسٹی ٹیوٹ نے انہیں ناشتہ اور پانی بھی فراہم کیا تھا۔
واضح رہے کہ جموں و کشمیر جانے والے ان طلبا نے بتایا کہ ریاست کے وزیر اعلی کی کوششوں کے بعد ہمارے لئے جانے کا انتظام ممکن ہوسکا ہے۔وزیراعلیٰ شیوراج سنگھ کی کوششوں سے ہم سب اپنے اپنے والدین تک پہنچ سکیں گے۔ غورطلب ہے کہ بھوپال سے 324 طلباء، اندور سے 69 ، جبل پور سے 25 ، ا±جین سے 18 ، ساگر سے 11 اور گوالیار سے 11 طلباءجموں کشمیرکے لئے روانہ ہوئے ہیں۔وہیں اُجین سے بھیجے گئے 18 طلباءمیں سے 3 نیمچکے ہیں۔ جموں وکشمیر کے 458 طلباءکو بسوں کے ذریعے دیر رات محفوظ طورپرجموں و کشمیر بھجوایا گیا ہے۔