جذام کی دوائی کے تجرباتی علاج سے کورونامریضوں کےلئے بنی امید


بھوپال:8مئی(نیانظریہ بیورو)
راجدھانی واقع ایمس اسپتال میں کورونا وائرس کے علاج کے لئے جذام (کوڑھ)کی دوا مائکو بیکٹیریم ڈبلیو کا کلینیکل ٹرائل کورونا سے متاثرہ مریضوں پر کیا جارہا ہے۔ اب اس کے ابتدائی نتائج بھی سامنے آرہے ہیں۔ ایمس مینجمنٹ کے مطابق ، اس کا ان مریضوں پر غلط اثر نہیں پڑا ہے ،جن پر مائکوبکیٹیریم ڈبلیو ٹرائل ہوا ہے ، حالانکہ اس کے کامیاب اور مکمل نتائج میں وقت لگے گا۔
مریضوں پر منشیات کا مثبت اثر:
نازک حالت میں مریضوں کوایم ڈبلیوکے 2 خوراکیں دی گئیں۔ جن کو وینٹیلیٹر کی ضرورت تھی۔ لیکن اب دونوں کی صورتحال نارمل ہے۔ چونکہ ایم ڈبلیو کے ساتھ ایک دوااور بھی دی گئی تھی ، اس لئے یہ کہنا مشکل ہے کہ کون سی دواکتنی اثر رکھتی ہے۔ اس کاعلیحدہ تجربہ کیاجائے گا۔لیکن ابتدائی مراحل میں یہ بات سامنے آرہی ہے کہ ایم ڈبلیو کے مریض پر کوئی برے اثرات یا کوئی مضر اثرات نہیں ہوتے ہیں۔
سی ایس آئی آر کی نگرانی میں ہورہاتجربہ:
معلومات کے مطابق ، اب اس دوائی کاتجربہ ان مریضوں میں بھی کیا جائے گا جن کی حالت نارمل ہے یا جو نشانزدہے۔ اس طرح مریض کو دن میں اس دوا کی دوخوراکیں شروع میں دی جائیں گی۔ آئی سی ایم آر اور امریکہ کی فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن کی منظوری کے بعد ، اپریل میں بھوپال کے ایمس میں کوڑھ (جذام)کے دوا کا کلینیکل تجربہ شروع کیا گیا تھا۔ اس مقدمے کی سماعت ملک کی سب سے بڑی تحقیقی ایجنسی کونسل آف سائنسی اور صنعتی تحقیق (CSIR) کی نگرانی میں کی جارہی ہے۔ یہ دوا جسم کی قوت مدافعت بڑھانے میں مددگار ثابت ہوتی ہے۔