ہمیں کورونا کے ساتھ جینا سیکھنا ہوگا، جون میں آئیں گے سب سے زیادہ کیس… ایمس ڈائریکٹر

ایمس کے ڈائریکٹر رندیپ گلیریا نے ایک ہندی نیوز پورٹل سے کورونا وائرس انفیکشن اور موجودہ حالات کے تعلق سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ “جس طریقے سے ٹرینڈ دیکھنے کو مل رہا ہے، کورونا کے کیس جون میں سب سے زیادہ سامنے آئیں گے۔ حالانکہ ایسا بالکل نہیں ہے کہ بیماری ایک بار میں ہی ختم ہو جائے گی۔ ہمیں کورونا کے ساتھ جینا سیکھنا ہوگا۔ دھیرے دھیرے کورونا کے معاملوں میں کمی آئے گی۔”

21 مئی نہیں، اب 31 اگست تک ہندوستان سے ختم ہوگا کورونا کا قہر!
سنگاپور یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی اینڈ ڈیزائن کی ایک تحقیق میں پہلے کہا گیا تھا کہ کورونا وائرس ہندوستان سے 21 مئی تک 97 فیصد ختم ہو سکتا ہے اور مکمل طور پر دسمبر 2020 تک ختم ہوگا۔ لیکن کورونا انفیکشن کے بڑھتے اثرات نے اس رپورٹ کی بخیا ادھیڑ کر رکھ دی ہے اور ایک تازہ رپورٹ جو سامنے آئی ہے اس سے پتہ چلتا ہے کہ ہندوستان میں کورونا کا قہر 21 مئی کی جگہ 31 اگست 2020 تک ختم ہوگا۔

مہاراشٹر: اب مالیگاؤں بن رہا ہاٹ اسپاٹ، 40 پولس اہلکار کورونا پازیٹو
مہاراشٹر کا مالیگاؤں کورونا وائرس کے نئے ہاٹ اسپاٹ کی شکل میں سامنے آ رہا ہے۔ خبروں کے مطابق یہاں کنٹنمنٹ زون میں ڈیوٹی کر رہے 40 پولس اہلکار کورونا پازیٹو پائے گئے ہیں۔ پولس اہلکاروں اور ایس آر پی ایف جوانوں کے کورونا پازیٹو ہونے سے مالیگاؤں میں حالات خوفناک ہوتے جا رہے ہیں۔ پوری ریاست میں پولس اہلکاروں کے کورونا پازیٹو ہونے کی تعداد 531 پہنچ چکی ہے جن میں 51 پولس افسر اور 480 پولس ملازم شامل ہیں۔

ممبئی میں تقریباً 250 پولس اہلکاروں کا کورونا ٹیسٹ پازیٹو
مہاراشٹر میں کورونا انفیکشن سے حالات انتہائی خراب ہوتے جا رہے ہیں۔ خصوصاً ممبئی میں ایک دہشت کا عالم دیکھنے کو مل رہا ہے۔ حالات اتنے خراب ہیں کہ لگاتار طبی اہلکاروں اور پولس اہلکاروں کے کووڈ-19 پازیٹو آنے کی خبریں مل رہی ہیں۔ تازہ ترین خبروں کے مطابق ممبئی میں تقریباً 250 پولس اہلکاروں کا کورونا ٹیسٹ رپورٹ پازیٹو آیا ہے۔ ممبئی پولس کمشنر پرمبیر سنگھ نے اس بات کی جانکاری دی۔ حالانکہ انھوں نے کہا کہ کووڈ-19 علامت والے کیس بہت کم ہیں اور ان میں سے کوئی بھی آئی سی یو میں نہیں ہے۔

تملناڈو: شراب کی دکانیں کھلنے سے ناراض خواتین نے سڑک پر اتر کر کیا مظاہرہ
ایک طرف جہاں لاک ڈاؤن میں نرمی دے کر شراب کی دکانیں کھولنے کا کئی ریاستی حکومتوں نے فیصلہ کیا ہے اور لوگوں کی لمبی قطاریں شراب خریدنے کے لیے لگی ہوئی نظر آ رہی ہیں، وہیں دوسری طرف خواتین حکومت کے اس فیصلے سے ناراض ہیں۔ تمل ناڈو میں بڑی تعداد میں خواتین نے گھروں سے باہر سڑکوں پر نکل کر حکومت کے اس فیصلے کے خلاف مظاہرہ کیا اور کہا کہ شراب کی فروخت پر فوراً پابندی عائد کی جائے۔