بی جے پی پر ہارس ٹریڈنگ کے الزام کوریاستی وزیر کوٹھہرایادرست

بی جے پی پر ہارس ٹریڈنگ کے الزام کوریاستی وزیر کوٹھہرایادرست
بھوپال :2مارچ(نیانظریہ بیورو) مدھیہ پردیش کے سابق وزیر اعلیٰ دگ وجئے سنگھ نے بی جے پی پر ہارس ٹریڈنگ کا الزام عائد کیا ہے ، جس کی وزیر سکھ دیوپانسے نے حمایت کی ہے۔ وزیر نے کہا کہ بی جے پی لیڈران جو 15 سال بعد اقتدار سے باہرہوئے ہیں وہ کانگریس کوبرسراقتدار ہضم نہیں کرپارہے ہیں۔اس لئے کانگریس کے ممبران اسمبلی کو خریدنے کے لئے مسلسل کوششیں کی جارہی ہیں۔ بی جے پی نے کانگریس کے بہت سے ارکان اسمبلی کو آفر کیا ہے۔معلوم ہوکہ وزیر نے بی جے پی پر طعنہ زنی کرتے ہوئے کہا کہ بی جے پی لیڈران اقتدار کے بھوکے ہیں۔ عوام نے انہیں اپوزیشن کا کردار دیا ہے ، لیکن وہ اقتدار کے لئے ضابطے کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کررہے ہیں۔ کمل ناتھ حکومت گزشتہ 15 سالوں کی بدعنوانی کا انکشاف کر رہی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ بی جے پی کانگریس حکومت کو غیر مستحکم کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔
انہوں نے مزیدالزام لگایا کہ بی جے پی نے کانگریس کے بہت سے اراکین اسمبلی سے رجوع کیا ہے ، کانگریس کے تمام ارکان اسمبلی ایماندار اور وفادار ہیں۔ حالانکہ وزیر نے اس بارے میںکچھ نہیں بتایا ہے کہ کانگریس کے کن ایم ایل اےز سے بی جے پی نے رابطہ کیا ہے۔وہیںسابق وزیر اعلیٰ دگ وجئے سنگھ نے دہلی میں الزام لگایا ہے کہ بی جے پی کے کچھ رہنما کانگریس کے ایم ایل اےز کو 25 سے 30 کروڑ کے لالچ دیکرتوڑنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ جس کی تائید ریاستی حکومت کے پی ایچ ای وزیر سکھدیو پانسے نے بھی کی ہے۔