اندور میں پلازما تھےرےپی کے بہترین نتائج آئے سامنے


تین میں دو کورونامثبت مریضوں کی رپورٹ آئی منفی
ا یک ڈونر کے بلڈ سے دو کورونا مریضوں کاکیا جا سکتا ہے علاج
اندور 29 اپریل (نیا نظریہ بیورو)
شہر میں پلازما تھےرےپی کے بہتر ین نتائج آنے کی توقعات کو تقویت ملی ہے۔ اتوار کو کورونامثبت تین مریضوں پر پلازما تھےرےپی کا ٹرائل شروع کیا گیا تھا۔ منگل کو دو مریضوں کی کورونارپورٹ منفی آئی۔ اگرچہ ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ کورونامتاثرہ پر پلازما تھےرےپی کے آخری نتائج آنے میں ابھی وقت لگے گا۔ مرکز حکومت کی اجازت کے بعد اندور کے اروندو میڈیکل کالج میں اتوار سے پلازما تھےرےپی سے کورونامثبت مریضوں کا علاج شروع کیا گیا ۔ دہلی اور چندی گڑھ کے بعد اندور ملک کا تیسرا شہر بن گیا ہے جہاں اس کے طریقہ کار سے علاج کیا گیا۔ کوروناسے صحت مند ہوئے تین ڈاکٹر اقبال قریشی ، اظہار منشی اور آکاش تیواری کے خون سے پلازما لیا گیا تھا۔ کورونامثبت مریضوں کے بلڈ گروپ سے ملاپ کے بعد اس پلازما کو تین مریض جن میں اندور ترقی اتھارٹی کے افسر کپل بھلا ، پریل جین اور انیس جین کو چڑھایا گیا۔ مریضوں میں اس سے قوت مدافعت کی صلاحیت بڑھتی ہے ، یہ جاننے کے لئے منگل کو انکوائری کی گئی۔ کورونامثبت تین مریضوں میں سے دو کی رپورٹ منفی آئی ہے۔
ٹی بی اسپتال میں بھی ہو گا پلازما سے علاج
ٹی بی اسپتال میں بھی کوروناکے سنگین مریضوں پر پلازما تھےرےپی کے ٹیسٹ کی تیاری کی جا رہی ہے۔ بھارتی انسٹیٹیوٹ تحقیق کونسل اس کی اجازت دے چکا ہے۔ ممکنہ طور اسی ہفتے یہ شروع کیا جائے گا۔ ایم وائی ایچ ٹرانس فیوزن کے شعبہ¿ صدر ڈاکٹر اشوک یادو نے بتایا کہ ہم اسی ہفتے ٹی بی اسپتال میں مریضوں پر کلینکل ٹرائل شروع کر دیں گے۔ پہلے ٹھیک ہونے والے مریضوں کا اینٹی باڈی ٹیسٹ کر ائیں گے۔ اس سے پتہ چل پائے گا کہ اس میں کتنے فیصد اینٹی باڈی تیار ہوئی ہے۔ ابتدا میں سنگین طور سے بیمار مریضوں پر اس کا استعمال کیا جائے گا۔ دو ڈاکٹر اور بلڈ بینک کے ایک ٹیکنیشین نے پلازما دینے کی خواہش ظاہر کی ہے۔ تینوں کورونا سے ٹھیک ہو چکے ہیں۔