موسمی چٹرجی نے رومانوی اداؤں سے فلم بینوں کو دیوانہ بنایا

(26 اپریل سالگرہ کے موقع پر خاص)
ممبئی: بالی ووڈ میں موسمی چٹرجی کوایک ایسی اداکارہ کے طور پر شمار کیا جاتا ہے جنہوں نے 70 اور 80 کی دہائی میں اپنی رومانوی اداؤں سے ناظرین کو اپنا دیوانہ بنایا۔ 26 اپریل 1953 کو کولکتہ میں پیدا ہونے والی موسمی چٹرجی نے اپنی فلمی زندگی کا آغاز سال 1967 میں آئی بنگلہ فلم بالیکا ودھو سے کیا تھا۔ ان کی یہ فلم باکس آفس پر سپر ہٹ ثابت ہوئی۔
موسمی نے بالی ووڈ میں اپنے فلمی کیریئر کا آغاز سال 1972 میں آئی فلم انوراگ سے کیا۔ اس فلم میں موسمی چٹرجی کے اپوزٹ ونود مہرا تھے۔ شکتی سامنت کی ہدایت میں بنی انوراگ میں موسمی چٹرجی نے نابینا لڑکی کا کردار ادا کیا تھا۔ کیریئر کے آغاز میں اس طرح کا کردار ادا کرنا کسی بھی نئی اداکارہ کے لئے چیلنج سے بھرپور ہو سکتا تھا لیکن موسمی نے اپنی سنجیدہ اداکاری سے ناظرین کو بے حد مسحور کیا۔ اس فلم کے لیے انہیں بہترین اداکارہ کے لئے فلم فیئر ایوارڈ سے نامزد کیا گیا تھا۔
سال 1974 میں موسمی چٹرجی نے روٹی کپڑا اور مکان اور بے نام جیسی سپر ہٹ فلموں میں اداکاری کی۔ روٹی کپڑا اور مکان کے لیے موسمی چٹرجی کو بہترین معاون اداکارہ کے لئے فلم فیئر ایوارڈ سے نوازا گیا۔ سال 1976 میں ان کی ایک اور سپر ہٹ فلم سب سے بڑا روپیہ ریلیز ہوئی۔ اس فلم میں ایک بار پھر موسمی چٹرجی اور ونود مہرا کی جوڑی کو بہت پسند کیا گیا۔
موسمی چٹرجی کے کیریئر میں ان کی جوڑی سب سے زیادہ ونود مہرا کے ساتھ پسند کی گئی۔ اس کے علاوہ انہوں نے سنجیو کمار، جتیندر، راجیش کھنہ، ششی کپور، امیتابھ بچن جیسے سپر ہٹ اداکاروں کے ساتھ بھی کام کیا ہے۔ انہوں نے ہندی فلموں کے علاوہ کئی بنگلہ فلموں میں بھی اپنی اداکاری کے جوہر دکھائے۔ ان کی کچھ دیگر قابل ذکر فلموں میں کچے دھاگے، زہریلا انسان، سورگ نرک، پھول کھلے ہیں گلشن گلشن، مانگ بھرو سجنا، جیوتی بنے جوالا، داسی، انگور، گھر ایک مندر، گھائل، سنتان، جلاد، قریب، زندگی راکسس وغیرہ شامل ہیں۔