شیوراج حکومت کسانوں کے ساتھ دھوکہ کر رہی ہے:کنال چودھری


بھوپال:18اپریل(نیانظریہ بیورو)
مدھیہ پردیش میں کانگریس اور بی جے پی کے درمیان بیان بازی کاسلسلہ جاری ہے۔ مدھیہ پردیش یوتھ کانگریس کے صدر اور ایم ایل اے کنال چودھری نے 15 اپریل سے ریاست میں گندم کی خریداری کے سلسلے میں حکومت کے انتظامات پر بہت سارے سوالات اٹھائے ہیں۔ حکومت پر کسانوں کو دھوکہ دینے کا الزام لگاتے ہوئے کانگریس ایم ایل اے نے کہا کہ خریداری مراکز میں بے ضابطگیاں پائی گئیں ہیں۔ ایم ایل اے کنال چودھری نے حکومت کو مشورہ دیا ہے کہ حکومت ہر پنچایت میں خریداری مراکز قائم کرے اور کسان کی ہر فصل کا ایک ایک اناج خریدے اور فصل کی پوری قیمت اسے دے۔واضح رہے کہ کانگریس لیڈر نے کہاہے کہ وہ گندم خریداری مرکز کا معائنہ کر رہے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ وہ کسانوں اور دیہاتیوں سے اس پر تبادلہ خیال کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ کسانوں کے سوال کو حکومت کے سامنے رکھنا چاہتے ہیں۔ میری اس تجویز کو بھی سمجھیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم اسے کس طرح بہتر طریقے سے انجام دے سکتے ہیں۔اس پرغورکرناضروری ہے تاکہ اس پرعملی جامہ پہنایاجاسکے اورکسانوں کوکسی پریشانی کاسامنا نہ کرناپڑے۔غورطلب ہے کہ کنال چودھری نے حکومت سے سوال کیا کہ جس سوسائٹی کے ذریعے گندم کی خریداری کی جارہی ہے۔ وہ خالی پڑی ہے۔ کسانوں تک پیغامات نہیں پہنچ رہے ہیں۔ روزانہ صرف 6 لوگوں تک ایس ایم ایس پہنچ رہے ہیں۔ اگراس لحاظ سے خرایداری کی گئی تو ہر خریداری مرکز میں 6 ماہ لگیں گے۔کانگریس ایم ایل اے نے حکومت سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ ہرسوسائٹی کو ہر فرد کے لئے گندم خریدنے کی ہدایت کی جانی چاہئے۔ کسانوں کے ذہن میں بہت سارے سوالات ہیں ۔ان مسائل کودورکیاجاناچاہئے۔