سوشل میڈیاپرزہراگلنے والے کیخلاف ہوگی سخت کارروائی


بھوپال:15اپریل(نیانظریہ بیورو)
سیاسی فائدہ اٹھانے کے ارادے سے اور خود کو ہندو و¿ں کی نظرمیں لیڈر ثابت کرنے کی دوڑ نے راجدھانی میں ایک پراپرٹی ڈیلر کو جیل کی سلاخوں میں پہنچنے کے حالات پیدا کردیئے ہیں۔ پولیس نے اس پراپرٹی ڈیلر کے خلاف سوشل میڈیا پر ایک خاص طبقے کے خلاف انتہائی قابل اعتراض الفاظ استعمال کرنے والے افراد کو دھمکیاں دینے کے الزام میں مقدمہ درج کیا ہے۔معلومات کے مطابق بھوپال کے رہائشی انیل بلچندانی نے سوشل میڈیا فیس بک سائٹ پر ایک پوسٹ شیئر کی ۔ اس پوسٹ میں انیل نے ایک اقلیتی طبقے کے لئے انتہائی قابل اعتراض الفاظ استعمال کیے ہیں۔ انیل نے اپنی پوسٹ میں اس طبقے کو براہ راست انتباہ دیا ہے اور انہیں ملک کا غدار قرار دیا ہے۔
معاشرے میں پھیلی نفرت:
اس فیس بک پوسٹ میں انیل کا اعتراض ظاہرکیاہے۔ وہیں اس طبقے کے لوگوں نے فیس بک پیج پر کوئی بحث مباحثہ کرنے یا مباحثہ کی صورتحال پیدا کرنے کے بجائے انیل کے خلاف قانونی کارروائی کو ترجیح دی ہے۔ انیل کو قانونی سبق سکھانے کے لئے اس نے شہر کے ہر تھانے میں اس کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے کی مہم چلائی۔ اس کے تحت اب تک بہت سارے لوگوں نے انیل کے خلاف شکایت درج کروائی ہے اور شہر کی ساکھ اور ماحول خراب کرنے سمیت فرقہ وارانہ منافرت پھیلانے کے الزام میں ان کے خلاف مقدمہ درج کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔
کرائم برانچ نے تفتیش کی شروع:
سائبر کرائم برانچ کی ہدایت کے بعد کرائم برانچ نے انیل بلچندانی کے خلاف مقدمہ درج کیا اور اس کے خلاف تحقیقات کا آغاز کردیا ہے۔ کرائم برانچ نے انیل کے عہدے کو معاشرے میں عدم استحکام کا جذبہ اور دونوں برادریوں کے مابین پھوٹ پڑ جانے کاثبوت قرار دیا ہے۔ جس کی وجہ سے دفعہ 505 (2) کے تحت انیل کے خلاف کارروائی شروع کی گئی ہے۔
باکس
تاحیات جیل میں قیدرہنے کاپروویزن:
سپریم کورٹ کے مشیر احتشام ہاشمی کا کہنا ہے کہ اگر کوئی شخص دو گروہوں یا طبقات کے مابین نفرت پھیلانے کے لئے کوئی رپورٹ یا بیان جاری کرتا ہے تو پھر اس کے خلاف آئی پی سی کی دفعہ 505 کے تحت مقدمہ درج کیا جاسکتا ہے۔ سوشل میڈیا پر ایسی افواہ آئی ٹی ایکٹ 2000 ، آئی ٹی ایکٹ 2008 (ترمیمی) کے تحت عمر قید کی سزا کا باعث ہوسکتی ہے۔ اس میں پولیس براہ راست متعلقہ شخص کو گرفتار کر سکتی ہے۔انہوں نے بتایا کہ اس طرح کے جرم میںنفرت پیدا کرنے اورپرامن ماحول خراب کرنے کے مقصد سے اس طرح کے پیغامات ، ویڈیو پیغامات، تصاویر ، آڈیو پیغامات ، چیٹس ، ای میلز وغیرہ شامل ہیں۔